Saturday , May 27 2017
Home / ہندوستان / نسیم الدین بی ایس پی سے خارج، مایاوتی پر جوابی تنقید

نسیم الدین بی ایس پی سے خارج، مایاوتی پر جوابی تنقید

فرزند افضل کا بھی اخراج ، مخالف پارٹی سرگرمیوں پر کارروائی۔ انتخابی ناکامی کیلئے مایاوتی ذمہ دار : نسیم

لکھنو ، 10 مئی (سیاست ڈاٹ کام) بی ایس پی نے آج اپنے مسلم چہرہ نسیم الدین صدیقی اور ان کے فرزند کو ’’مخالف پارٹی‘‘ سرگرمیوں میں ملوث ہونے کی پاداش میں پارٹی سے خارج کردیا، جس پر برطرف ایم ایل سی نے پارٹی سربراہ مایاوتی پر جوابی تنقید کی ہے۔ انھیں اور ان کے فرزند افضل کو پارٹی کی جانب سے اخراج کی راہ دکھا دینے کے چند گھنٹوں بعد نسیم الدین نے کہا، ’’جو کچھ الزامات میرے خلاف عائد کئے گئے ہیں، وہ ان (مایاوتی) پر عائد ہوتے ہیں اور میں ان کو ثبوت کے ساتھ ثابت کرسکتا ہوں‘‘۔ بی ایس پی جنرل سکریٹری اور رکن راجیہ سبھا ایس سی مشرا نے کہا کہ نسیم الدین اور ان کے فرزند افضل پارٹی سے خارج کئے جاچکے ہیں۔ وہ کئی مسالخ میں شراکت رکھتے ہیں اور ان کی کئی بے نامی جائیدادیں بھی ہیں۔ انھوں نے اسمبلی چناؤ کے دوران رقم بھی قبول کی جس کی وجہ سے پارٹی کو شکست سے دوچار ہونا پڑا۔ انھوں نے یہ بھی الزام عائد کیا کہ نسیم الدین لوگوں سے کام کے عوض ’’رقم قبول‘‘ کرتے اور مزید کہا کہ بی ایس پی اس طرح کی ڈسپلن شکنی برداشت نہیں کرے گی۔ نسیم الدین کا تعلق بانڈہ سے ہے، انھیں قبل ازیں اترپردیش کے پارٹی انچارج کی حیثیت سے ہٹاتے ہوئے اسمبلی چناؤ ناکامی کے تناظر میں ایم پی یونٹ انچارج مقرر کیا گیا تھا۔ بی ایس پی بانی کانشی رام کے ساتھ اپنے روابط کو یاد کرتے ہوئے نسیم الدین نے کہا، ’’میں زائد از تین دہے ان کے نظریہ سے جڑا رہا۔ پارٹی کی خاطر میں میری علیل بیٹی کی عیادت تک نہیں کرپایا جو خاطرخواہ علاج کے فقدان کے سبب فوت ہوگئی، کیونکہ مایاوتی نے انتخابات کے دوران میری خدمات چاہیں اور مجھے اپنے مفاد کیلئے جانے کی اجازت نہیں دی‘‘۔ بی ایس پی کے 2009ء اور 2014 ء (لوک سبھا) ، 2012ء اور 2017ء (یو پی اسمبلی) میں ناقص مظاہرے کیلئے مایاوتی کی ’’غلط پالیسیوں‘‘ کو موردالزام ٹھہراتے ہوئے انھوں نے الزام عائد کیا کہ بی ایس پی سربراہ نے مسلمانوں کے خلاف ’’جھوٹے اور گمراہ کن‘‘ الزامات لگائے اور بالخصوص 2017ء چناؤ میں ان کے خلاف قابل اعتراض تبصرے کئے۔ بی ایس پی سربراہ مایاوتی نے اسمبلی چناؤ کے بعد بڑے پیمانے پر تنظیمی ردوبدل انجام دیا اور اپنے برادر آنند کمار کو سرگرم سیاست میں متعارف کراتے ہوئے انھیں پارٹی کا نائب صدر بنایا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT