Sunday , August 20 2017
Home / اضلاع کی خبریں / نظام آباد میں ارکان اسمبلی ترقیاتی کام انجام دینے میں ناکام

نظام آباد میں ارکان اسمبلی ترقیاتی کام انجام دینے میں ناکام

نظام آباد:20؍ ڈسمبر (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)ریاستی حکومت کی جانب سے مواضعات میں مثالی ترقی انجام دینے کیلئے ہر رکن اسمبلی کو 2 دیہاتوں کو منتخب کرتے ہوئے ان دیہاتوں میں بنیادی سہولتوں کی فراہمی، آبی سہولتیں، تعلیمی سہولتیں، خواتین و اطفال کی بہبودی مثالی طور پر انجام دینے کیلئے ہر رکن اسمبلی کو ہدایت دی تھی اور گراما جیوتی میں ان دیہاتوں کو منتخب کیا گیا تھا لیکن تین ماہ کا وقفہ گذرنے کے باوجود بھی ان دیہاتوں میں کوئی کام ابھی تک انجام نہیں دیا۔ رکن اسمبلی کاماریڈی گمپا گوردھن نے اپنے آبائی موضع بھکنور منڈل کے موضع بسوا پور اور ماچہ ریڈی منڈل کے چکا پورکو منتخب کیا تھااور اسی کے تحت بسوا پور میں سی سی روڈس، ڈرینج اور سڑکوں کی تعمیر کاموں کو انجام دیا گیا۔ ماچہ ریڈی منڈل کے چکا پور میں ابھی تک کوئی ترقیاتی کاموں کو انجام نہیں دیا گیا۔ سی سی روڈس کی تعمیر اور پینے کے پانی کی قلت اور اسکول بلڈنگ کی تعمیر اور دومکنڈہ منڈل کے جنگائوں میں اسی اسکیم کے تحت دو بورویلس کی کھدوائی اور کاماریڈی منڈل کے اگروائی میں انفرادی بیت الخلاء تعمیر کئے گئے۔ ابھی تک دیگر کام زیر التواء ہے۔ رکن اسمبلی جکل ہنمنت شنڈے نے بعض مواضعات میں مثالی ترقی انجام دینے کا اعلان کیا تھا۔ لیکن ابھی تک یہ کام زیر التواء ہے۔ منتخب کردہ جکل منڈل کے کھنڈے بلور میں مسائل جوں کے توں برقرار ہیں۔ پینے کے پانی کی شدید قلت ہے۔ انفرادی بیت الخلائوں کی تعمیر ابھی تک شروع نہیں کی گئی ۔ مدنور منڈل کے شکا پور، نظام ساگر منڈل کے گورگل ، بچکندہ منڈل کے چنا دیواڑہ،پٹلم منڈل کے کڑتی میں مسائل جوں کے توں برقرار ہیں۔ کڑتی میں منعقدہ پروگرام میں وزیر پنچایت راج شرکت کے باوجود بھی ابھی تک کوئی کام انجام نہیں دئیے گئے۔ رکن اسمبلی نظام آباد رورل باجی ریڈی گوردھن اپنے حلقہ میں 5دیہاتوں میں مثالی ترقی انجام دینے کا اعلان کیا تھا۔ نظام آباد منڈل کے منچپہ میں تین کالونیوں میں مورم اندازی کرتے ہوئے سڑک کے دونوں جانب واقع قابضین کو برخواست کروایا تھا۔ تب سے اب تک کوئی کام انجام نہیں دیا گیا۔ اندلوائی کی مثالی ترقی انجام دینے کیلئے قومی شاہراہ سے اندلوائی، تریامبکا پیٹا 3 کروڑ روپئے سے سی سی روڈ کی ترقی عمل میں لائی گئی ۔ سرکنڈہ منڈل کے ایم پی ڈی او آفس کے اطراف بائونڈری وال تعمیر کی گئی ۔ حلقہ کے درپلی ، جکران پلی کے ترلی کنڈہ منڈلوں میں ابھی تک کام شروع نہیں کئے گئے۔ رکن اسمبلی بودھن شکیل عامر نے اپنے حلقہ میں 4 دیہاتوں میں مثالی کام انجام دینے کا اعلان کیا تھا ۔ رنجل منڈل کے دو پلی میں 2 کروڑ روپئے سے ترقیاتی کام انجام دینے کیلئے تخمینہ کیا گیالیکن کاموں کو ابھی تک شروع نہیں کیا گیا ۔ ایڑپلی منڈل کے سی آر پی کیمپ میں پینے کے پانی کی شدید قلت ہے جس کی وجہ سے سی آر پی کیمپ کی عوام کھیتوں سے پینے کا پانی حاصل کررہے ہیں۔ نوی پیٹھ منڈل کے جنا پلی میں 32 مسائل کی نشاندہی کی گئی ہے۔ جن میں سے ان کاموں کو بھی شروع نہیں کیا گیا۔ بودھن منڈل کے بردی پور میں 2 بورویلس کی کھدوائی کرتے ہوئے آبی سہولتوں کی فراہمی کی کوشش کی گئی ۔رکن اسمبلی یلاریڈی اے رویندرریڈی اپنے آبائی وطن ایرہ پہاڑ میں ابھی تک کام شروع نہیں کیا ۔ گندھاری منڈل کے جواڑی، ناگی ریڈی پیٹھ منڈل کے پوچارام ، یلاریڈی منڈل کے تما ریڈی، لنگم پیٹھ منڈل کے موتے سداشیو نگر منڈل کے اوپلوائی میں سڑکوں کی تعمیر کے بجائے ڈرین کی تعمیر کی گئی ۔ رکن اسمبلی آرمور جن دیہاتوں میں مثالی کام انجام دینے کا اعلان کیا تھامامڑی پلی میں شب بسری کرتے ہوئے220 انفرادی بیت الخلائوں کی تعمیر انجام دی ۔ نندی پیٹھ منڈل کے حدود میں لنگڑا پور بریج کی تعمیر کیلئے ایک کروڑ روپئے خرچ کئے گئے۔ باقی کام زیر التواء ہے۔ بالکنڈہ رکن اسمبلی پرشانت ریڈی نے 5 دیہاتوں میںترقیاتی کام انجام دینے کا اعلان کرتے ہوئے کمر پلی منڈل کے چوٹ پلی کے بڑے تالاب کی مرمت کیلئے کام انجام دینے کی ضرورت پر زور دیا۔ لیکن کاموں کو ابھی تک شروع نہیں کیا گیا ۔ موڑتاڑ منڈل میں روشنی کے انتظامات کے علاوہ بالکنڈہ منڈل کے کتا پلی میں بورویلس کی کھدوائی، ویلپور منڈل کے پڑگل میں دو بورویلس کی کھدوائی کی گئی باقی کام زیر التواء ہے ۔ گرام پنچایت کے دوران منتخب کردہ دیہاتوں میں ابھی تک کوئی کام انجام نہ دینے کی وجہ سے یہ کام زیر التواء ہے۔ جنگی خطوط پر ان کاموں کو انجام دینے کیلئے عوام کی جانب سے مطالبہ کیا جارہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT