Sunday , August 20 2017
Home / ہندوستان / نقد رقم کی قلت کا ساتواں دن ،بینکوں اور اے ٹی ایمس پر طویل قطاریں ،ایک فوت

نقد رقم کی قلت کا ساتواں دن ،بینکوں اور اے ٹی ایمس پر طویل قطاریں ،ایک فوت

ممبئی۔ 15 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) نقد رقم کی قلت، بڑی نوٹوں کی تنسیخ کے بعد سات دن سے جاری ہے۔ عوام بینکوں اور اے ٹی ایمس پر علی الصبح سے قطاروں میں کھڑے ہیں، انہیں خوف ہے کہ اے ٹی ایمس میں رقم ختم ہوجائے گی۔ حیدرآباد سے ایک عمر رسیدہ شخص کے قطار میں کھڑے کھڑے فوت ہوجانے کی اطلاع ملی ہے۔ لاکھوں عوام بینکوں کے کھلنے سے بہت پہلے قصبوں اور شہروں میں ملک گیر سطح پر نوٹوں کی تبدیلی، انہیں جمع کروانے یا پیسہ حاصل کرنے کیلئے علی الصبح سے کھڑے ہوئے تھے۔ صورتِ حال سنگین نظر آتی ہے اور دن بہ دن شدت اختیار کررہی ہے۔ چھوٹے کاروباری بھی سخت مشکلات کا سامنا کررہے ہیں کیونکہ چلر کی قلت کی وجہ سے کاروبار متاثر ہیں۔ ریٹائرڈ سرکاری ملازم لکشمن راؤ جو 1.5 لاکھ روپئے ڈپازٹ کروانے ایس بی آئی ماریڈ پلی آیا تھا ، بینک کے باب الداخلہ پر فوت ہوگیا۔ مرکزی کابینہ کے اجلاس میں صورتحال کا جائزہ لیا گیا۔ ایک اطلاع کے بموجب اے ٹی ایمس کی کارکردگی گزشتہ دنوں کی بہ نسبت بہتر ہوجانے سے صارفین کو راحت حاصل ہوئی تاہم کرنسی کی تبدیلی کیلئے عوام کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ سی پی آئی اور ڈی وائی ایف آئی کے کارکنوں نے آر بی آئی ترواننتاپورم تک علیحدہ علیحدہ جلوس نکالے اور بڑی نوٹوں کی تنسیخ کے خلاف احتجاج کیا۔ دہلی میں عوام کی کثیر تعداد اے ٹی ایمس اور بینک پر علی الصبح سے قطار بنانا شروع کرچکی تھی، کیونکہ انہیں خوف تھا کہ مشینوں میں جمع رقم جلد ہی ختم ہوجائے گی۔ آر بی آئی کے روبرو احتجاجی مظاہرین کو منتشر کرنے کیلئے لاٹھی چارج کیا گیا۔ نئی دہلی سے موصولہ اطلاع کے بموجب عوام بنیادی ضروریات کی تکمیل کیلئے جدوجہد کرتے نظر آئے۔ ممبئی اور چینائی سے موصولہ اطلاع کے بموجب اے ٹی ایمس اور بینک کے روبرو قطاریں سات دن بعد بھی کافی طویل ہیں۔

TOPPOPULARRECENT