Sunday , June 25 2017
Home / Top Stories / نوٹوں کی تنسیخ پر آج پارلیمنٹ اجلاس میں ہنگامہ متوقع

نوٹوں کی تنسیخ پر آج پارلیمنٹ اجلاس میں ہنگامہ متوقع

کُل جماعتی اجلاس میں اپوزیشن قائدین کا حکومت کی مخالفت کا متفقہ فیصلہ
نئی دہلی ؍ کولکتہ ؍ ممبئی ۔ 15 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) نقد رقم کی قلت پر بڑھتی ہوئی مایوسی کے دوران پارلیمنٹ میں امکان ہے کہ اپوزیشن کے احتجاج کا ہنگامہ کل سرمائی اجلاس کے پہلے دن دیکھا جائے گا۔ متحدہ اپوزیشن ، حکومت کو اس مسئلہ پر گھیرنے کیلئے تیار ہے۔ ممتا بنرجی کی ترنمول کانگریس راشٹرپتی بھون تک اپوزیشن پارٹیوں کو جلوس کی تجویز سے متفق نہیں ہوئی ہے، تاہم اس نے بڑی کرنسی نوٹوں کی تنسیخ کے خلاف احتجاج کی تائید کی۔ اہم اپوزیشن کانگریس کی زیرقیادت 13 پارٹیوں نے عہد کیا کہ اس مسئلہ سے عام آدمی کو درپیش مشکلات کو پوری شدت کے ساتھ اُٹھایا جائے گا۔ اس تحریک کا مقصد سسٹم سے کالے دھن کی وصولی ہے۔ اے ٹی ایمس نقد رقم تقسیم کرنے کیلئے جدوجہد کررہے ہیں اور بینکس 500 اور 1000 روپئے کے نوٹوں کی تنسیخ کی وجہ سے دباؤ کے تحت لڑکھڑا رہے ہیں۔ کانگریس زیرقیادت اپوزیشن اس مسئلہ پر حکومت کو گھیرنے کی حکمت عملی تیار کررہی ہے۔ 13 اپوزیشن پارٹیوں بشمول کٹر حریف ترنمول کانگریس اور سی پی آئی ایم کے علاوہ بی ایس پی، ایس پی، جے ڈی (یو) اور ڈی ایم کے پر مشتمل اجلاس میں اپوزیشن قائدین نے متفقہ طور پر یہ فیصلہ کیا کہ اس مسئلہ پر صدرجمہوریہ سے ملاقات کی جائے گی۔ قبل ازیں یہ مسئلہ پارلیمنٹ میں پوری طاقت کے ساتھ اُٹھایا جائے گا۔ کُل جماعتی اجلاس میں وزیراعظم نریندر مودی بھی شریک تھے۔ انہوں نے نوٹوں کی تنسیخ کے سلسلے میں اپوزیشن سے تائید طلب کی اور کہا کہ اس کا مقصد دہشت گردی کی مالی امداد کا انسداد اور کالے دھن کی وصولی ہے۔ جعلی نوٹوں کو برآمد کرنا ہے، لیکن اپوزیشن پارٹیوں نے اُن کی کوتاہیاں تلاش کیں اور ان پر الزام عائد کیا کہ وہ رازداری کے اُصولوں کی پابندی نہیں کررہے ہیں اور اپنی کارروائی کا قبل از وقت انکشاف کررہے ہیں۔اپوزیشن اپنے موقف پر اٹل رہی۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT