Wednesday , August 23 2017
Home / ہندوستان / نوٹوں کی منسوخی، کئی کروڑپتی، بھکاریوں کے آگے ہاتھ پھیلانے پر مجبور

نوٹوں کی منسوخی، کئی کروڑپتی، بھکاریوں کے آگے ہاتھ پھیلانے پر مجبور

ایک کروڑپتی نے گداگروں کو ڈھائی لاکھ روپئے دیکر 90 ہزار روپئے حاصل کیا، دوسرے صنعتکاروں نے 10 لاکھ دیکر پانچ لاکھ لیا
نئی دہلی ۔ 11 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) 500 اور 1000 روپئے کے قدیم کرنسی نوٹ پر امتناع کے بعد سارے ملک میں 100 اور اس سے کم قدر کے نوٹوں کی شدید قلت پیدا ہوگئی ہے جس کے نتیجہ میں بعض ایسے واقعات بھی دیکھنے میں آئے ہیں کہ کئی کروڑپتی راتوں رات بھکاری بن گئے اور کئی بھکاری راتوں رات کم سے کم لکھ پتی ضرور بن گئے اور مزید ایک ہفتہ تک یہی صورتحال جاری رہے گی تو ایسا محسوس ہوتا ہیکہ بھکاریوں کے پاس موجود چھوٹے نوٹس بھی ختم ہوجائیں گے اور خود کروڑپتیوں کو بھیک مانگنے کیلئے سڑکوں پر نکلنا پڑے گا۔ چھوٹے نوٹوں کی تلاش کی ایک ایسی ہی کہانی جو دہلی کے پاس چھترپور فارم ہاؤز سے شروع ہوئی تھی جو بنگلور میں بھکاریوں کے ایک سلم علاقہ روکولی پورم پر ختم ہوئی جب ایک ایسے ارب پتی شخص کو جو نئی دہلی کے دولتمندوں کے کلب میں شامل ہے، دہلی جمخانہ، دہلی ڈسٹرکٹ کرکٹ اسوسی ایشن اور گولف کلب میں اہم مقام رکھتاہ ے۔ منگل کی شب ایک کروڑپتی کی حیثیت سے سویا تھا لیکن چہارشنبہ کی صبح اسے ایک قلاش شخص کی حیثیت سے بیدار ہوا جس کے پاس گھر اور بینکوں میں کروڑوں روپئے تو ہیں لیکن 100 ، 50 یا اس سے کم قدر کے نوٹس نہیں ہیں۔

500 اور 1000 روپئے کے موجودہ نوٹ کاغذ کے ٹکڑوں میں تبدیل ہوچکے تھے۔ وہ بنگلور میں ایک ملٹی نیشنل یوروپی کمپنی کا کنٹراکٹ بھی لیا اور چہارشنبہ کے روز 90,000 روپئے ادا کرنا ضروری تھا اس کے کئی دولتمند دوست تھے  لیکن مشکل میں کوئی کام نہیں آ سکے۔ ایک دوست نے ازراہ مذاق مشورہ دیا کہ بھکاریوں کے پاس سے یہ رقم مل سکتی ہے۔ چنانچہ اس نے گداگروں کے سرغنہ سے مدد لی اور 2,50,000 روپئے ادا کرتے ہوئے 100 اور 50 روپئے کے کرنسی نوٹوں میں 90,000 روپئے حاصل کرلیا۔ اس طرح میرٹھ سے تعلق رکھنے والے ایک خاندان نے بنگلور میں اپنی بیٹی کی رقم منگنی کیلئے بھکاریوں کو 10 لاکھ روپئے دیکر 5 لاکھ روپئے حاصل کیا۔ اس خاندان کا سالانہ کاروبار اگرچہ 300 کروڑ روپئے ہے لیکن رسم منگنی کے انعقاد کیلئے دوگنی قیمت ادا کرنے کے باوجود بھکاریوں کے آگے ہاتھ پھیلانا پڑا۔

TOPPOPULARRECENT