Wednesday , October 18 2017
Home / شہر کی خبریں / نوٹ بندی اور جی ایس ٹی سے کئی کمپنیاں بحرانی کا شکار

نوٹ بندی اور جی ایس ٹی سے کئی کمپنیاں بحرانی کا شکار

جئے شاہ کی مالیاتی بے قاعدگیوں پر مودی کو بیان پر زور : من پرت سنگھ بادل
حیدرآباد ۔ 11 ۔ اکٹوبر : ( سیاست نیوز ) : پنجاب کے وزیر فینانس من پرت سنگھ بادل نے بی جے پی کے قومی صدر امیت شاہ کے فرزند جئے شاہ کی مالیاتی بے قاعدگیوں کے خلاف خاموشی توڑنے کا وزیراعظم نریندر مودی سے مطالبہ کیا ۔ نوٹ بندی اور جی ایس ٹی پر عمل آوری سے کئی کمپنیاں بحران کا شکار ہوگئی ۔ جئے شاہ کی ٹمپل کمپنی 80 کروڑ روپئے کے منافع میں کیسے آگئی وضاحت کرنے کا مرکزی وزیر فینانس ارون جیٹلی پر زور دیا ۔ آج گاندھی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے یہ بات بتائی ۔ اس موقع پر صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی اتم کمار ریڈی کے علاوہ دوسرے قائدین موجود تھے ۔ پنجاب کے وزیر فینانس نے کہا کہ نریندر مودی کی سرکار بدعنوانیوں میں غرق ہوچکی ہے ۔ ساڑھے تین سالہ دور حکومت میں وزیراعظم نریندر مودی نے ملک کو صرف اسکامس دئیے ہیں ۔ بیروزگار نوجوانوں کو کوئی روزگار فراہم نہیں کئے تاہم نوٹ بندی اور جی ایس ٹی پر عمل کرتے ہوئے پہلے سے جو روزگار حاصل کررہے تھے انہیں بیروزگار بنادیا گیا ہے ۔ نوٹ بندی اور جی ایس ٹی سے ملک کو اور عام آدمی کو کوئی فائدہ نہیں پہونچا تاہم بی جے پی قائدین اور ان کے ارکان خاندان کے علاوہ بڑی بڑی کمپنیوں اور کارپوریٹ اداروں کو فائدہ پہونچا ہے ۔ جس کی تازہ مثال بی جے پی کے قومی صدر امیت شاہ کے فرزند جئے شاہ کی کمپنی کی ہے ۔ جئے شاہ کی کمپنی ٹمپل انٹرپرائزس 2013-14 میں نقصانات کا شکار تھی تعجب ہے ایک سال میں 80 کروڑ کے فائدے میں پہونچ گئی ۔ اس کی وضاحت کرنے کی مرکزی وزیر فینانس ارون جیٹلی سے اپیل کی ۔ ایک سال میں ترقی کے لیے کونسا فارمولہ اپنایا گیا ۔ نقصانات میں چلنے والی کمپنی کو بینکوں نے قرض کیسے دیا ۔ من پرت سنگھ بادل نے کہا کہ جھارکھنڈ میں بحیثیت آزاد امیدوار مقابلہ کرنے والے راجیہ سبھا امیدوار کو بی جے پی کے ارکان اسمبلی نے تائید کی جس کے نتیجے میں اسی ریاست کے ایک بینک نے بغیر کسی ضمانت کے ٹمپل انٹرپرائزس کمپنی کو 15 کروڑ روپئے کا قرض دیا ہے ۔ قرض حاصل کرنے کے لیے جو بینکنگ قواعد ہے اس کو نظر انداز کردیا گیا یہی نہیں سرکاری امدادی بینک سے بھی 25 کروڑ روپئے کا قرض منظور کیا گیا ۔ یہی نہیں انڈین رینوبیل انرجی ادارہ نے 10 کروڑ روپئے کی رعایت بھی دی ہے ۔ اس کے لیے مرکزی وزیر پیوش گوئیل ذمہ دار ہیں، پیوش گوئیل نے اپوزیشن جماعتوں کے خلاف ہتک عزت کا مقدمہ دائر کرنے کی دھمکی دی اور تعجب کی بات یہ ہے کہ مرکزی وزیر کو اٹارنی جنرل نے اس طرح کا مشورہ دیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس پارٹی ان دھمکیوں سے ڈرنے گھبرانے والی نہیں ہے ۔ اگر مرکزی حکومت سنجیدہ ہے تو اس کی فوری عدالتی تحقیقات کرانے کا مطالبہ کیا ۔۔

TOPPOPULARRECENT