Tuesday , September 26 2017
Home / ہندوستان / نوٹ بندی کی وجہ سے فاقہ کشی کی نوبت

نوٹ بندی کی وجہ سے فاقہ کشی کی نوبت

سرکاری معاوضہ کی خاطر نس بندی کیلئے مجبور
علیگڑھ۔28 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) بلیک منی کے صفایا کے مقصد سے کرنسی نوٹوں کی منسوخی کے بعد ملک بھر میں افراتفری کا عالم پیدا ہوگیا۔ صنعتی اور کھیت مزدور جزمعاش سے محروم ہوگئے جبکہ دوسری طرف معمولی رقم حاصل کرنے کے لئے اے ٹی ایمس پر طویل قطاروں میں ٹہرنے والوں کی دماغی صحت بھی متاثر پائی گئی۔ ماہر نفسیات نے ایک تجزیہ میں یہ انکشاف کیا اور بتایا کہ جیب میں رقم نہ ہونے پر کئی افراد ذہنی تنائو اور مایوسی میں آگئے ہیں۔ تاہم ایک صدمہ انگیز واقعہ علیگڑھ میں پیش آیا ہے۔ جہاں ایک شخص نے سرکاری ہاسپٹل میں اپنی نس بندی کروائی تاکہ سرکاری امداد سے اپنے خاندان کیلئے دو وقت کی روٹی کا انتظام کیا جاسکے۔ یومیہ اجرت پر کام کرنے والے ایک مزدور پورن شرما کرنسی نوٹوں کی منسوخی کے بعد اپنے خاندان کی کفالت سے قاصر ہوگیا تھا اور محض حکومت سے معاوضہ کی رقم حاصل کرنے کے لئے قریب میں ایک کیمپ سے رجوع ہوکر اپنی نس بندی کروائی۔ پورن شرما نے بتایا کہ اعلی قدر کی نوٹوں کی منسوخی کے بعد کو،ی قرض یا امداد کرنے کیلئے تیار نہیں تھا۔ بحالت مجبوری اس نے نسبندی کرواتے ہوئے سرکاری معاوضہ حاصل کرلیا بتایا جاتا ہے کہ ماہ نومبر نس بندی کروانے والوں کی تعداد 167 تک پہنچ گئی جبکہ گزشتہ سال اس مدت کے دوران 82 تھی۔ پورن شرما کے والد نے بتایا کہ گائوں کے متعدد لوگوں نے فاقہ کشی سے بچنے کے لئے مجبوراً نس بندی کروائی ہے۔

TOPPOPULARRECENT