Wednesday , June 28 2017
Home / شہر کی خبریں / نکاح کو آسان بنانے کیلئے عوام میں شعور بیداری پر زور

نکاح کو آسان بنانے کیلئے عوام میں شعور بیداری پر زور

میڈیا پلس میں سمینار، مولانا انعام الحق ، ڈاکٹر علیم خان فلکی و دیگر کا خطاب
حیدرآباد۔/21مئی، ( دکن نیوز) ملت اسلامیہ موجودہ دور میں بڑے گمبھیر مسائل سے دوچار ہے اس ماحول میں بھی انہیں خیر امت کا حق ادا کرنا ہوگا، اس سے کسی قسم کی پہلوتہی اختیار نہیں کی جاسکتی۔ اسلامی تعلیمات نے اس بات کی اجازت دی ہے کہ نکاح کو آسان بنایا جائے لیکن موجودہ رسومات اور مختلف تہذیبوں کو اختیار کرتے ہوئے شادی اور نکاح کو بڑا مشکل بنادیا جارہا ہے۔ ایسے میں سماجی، ملی تنظیموں اور اداروں کو آگے آنا چاہیئے کہ مسلمانوں کا شعور بیدار کرتے ہوئے خلاف سنت شادیوں اور دعوتوں اور باراتوں کا مکمل بائیکاٹ کریں۔ اور ساتھ ہی اس بات کو سماج و معاشرہ تک پیش کرنا ہوگا کہ نکاح کے وقت جہیز کا لینا اور مطالبہ کرنا ظلم ہے اور اسلام مرد پر ذمہ داری ڈالتا ہے کہ وہ عورت کی کفالت کا حق ادا کرے۔ ان خیالات کا اظہار مقررین نے سوشیوریفارم سوسائٹی کے زیراہتمام سمینار سے کیا۔ جو میڈیا پلس آڈیٹورم نظامیہ کامپلکس گن فاؤنڈری میں منعقد ہوا۔ سمینار کا موضوع ’’ عصر حاضر میں جہیز اور ریسپشین ۔ ناجائز کیوں ؟ اور ایسی دعوتوں کے بائیکاٹ کا شرعی حکم کیا ہے‘‘ رکھا گیا۔ اس موقع پر شرکاء میں سوشیو ریفارمس سوسائٹی نے کارڈس کی تقسیم کرتے ہوئے عہد اور دستخط لئے۔ مولانا فصیح الدین نظامی (جامعہ نظامیہ ) نے کہا کہ موجودہ دور میں شادیوں میں بے جا اسراف اور نئے نئے رسومات ہورہے ہیں اس پر روک لگانے کی شدید ضرورت ہے۔ مولانا انعام الحق قاسمی ( امیر محکمہ شرعیہ ) نے بچہ کی پیدائش پر جو مالی بوجھ ڈالا جاتا ہے یہ بھی ظلم کی تعریف میں آتا ہے۔ اس وقت معاشرہ میں نئے نئے فتنے اور بے راہ روی کا ماحول پیدا ہوتا جارہا ہے۔ ڈاکٹر علیم خان فلکی نے سوشیو ریفارمس سوسائٹی کے ذریعہ اس سلگتے ہوئے مسئلہ کے حل اور تدارک کے لئے جو کوششیں کی جارہی ہیں تفصیل بتائی اور کہا کہ اگر درد دل کے ساتھ اس مسئلہ پر غور کریں اور شادیوں کو آسان بنانے کیلئے میدان عمل میں آئیں اور ساتھ دیں تو ضرور اللہ راہیں بنائے گا۔شادی بیاہ کے معاملات اور بیجا رسومات میںنفس و ضمیر کا بڑا دخل رہا ہے وہ جس طرح نچانا چاہے نچاتے رہتا ہے۔ ہم اپنے خاندان اور معاشرہ سے 10افراد کو تیار کریں تو بعید نہیں کہ اس مسئلہ کا حل نکل آئے۔ انہوں نے کہا کہ شادیوں کو آسان بنانا ہی حب نبویؐ اور اتباع رسولؐ ہے۔ اس تعلق سے مسلمان ابھی تک خواب غفلت میں رہ کر خاندان، بیوی بچوں کی آرزو اور خواہشات کو پورا کررہے ہیں اس سے انہیں نکلنا ہے تو شادیوں کو آسان بنانا ہوگا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT