Thursday , September 21 2017
Home / سیاسیات / نیشنل گرین ٹریبونل کے فیصلہ پر روی شنکر کی سرکشی پارلیمنٹ میں اپوزیشن کا اظہار تشویش

نیشنل گرین ٹریبونل کے فیصلہ پر روی شنکر کی سرکشی پارلیمنٹ میں اپوزیشن کا اظہار تشویش

نئی دہلی۔/11مارچ، ( سیاست ڈاٹ کام ) راجیہ سبھا میں اپوزیشن نے آج نیشنل گرین ٹریبونل کے فیصلہ کے خلاف آرٹ آف لیوینگ کے بانی روی شنکر کی سرکشی پر تشویش کا اظہار کیا جبکہ ٹریبونل نے دریائے یمنا کے علاقہ میں ایک کلچرل پروگرام منعقد کرنے پر ان کے ادارہ کے خلاف 5 کروڑ ہرجانہ عائد کیا ہے۔ ایوان میں وقفہ صفر شروع ہوتے ہی جنتا دل ( متحدہ ) کے سربراہ شرد یادو نے یہ مسئلہ اٹھایا اور کہا کہ روی شنکر نے نیشنل گرین ٹریبونل کے حکم کو چیلنج کیا ہے اور ہرجانہ کی رقم ادا کرنے سے یکسر انکار کردیا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ یہ ایک سنگین مسئلہ ہے اور روی شنکر کو جیل بھیجنے کے بجائے این ڈی اے حکومت ان کی سرپرستی کررہی ہے۔ مسٹر شرد یادو نے کہا کہ 3روزہ عالمی تہذیبی میلہ میں 35لاکھ افراد کی شرکت متوقع ہے۔ اس قدر بھاری ہجوم اکٹھا ہونے پر سلامتی کا مسئلہ پیدا ہوسکتا ہے۔ اپوزیشن لیڈر غلام نبی آزاد کے علاوہ کانگریس، لیفٹ اور سماجوادی پارٹی کے ارکان نے بھی سینئر لیڈر کی جانب سے اٹھائے گئے اس مسئلہ سے یگانگت کا اظہار کیا۔ سابق وزیر ماحولیات اور کانگریس رکن جئے رام رمیش نے کہا کہ آرٹ آف لیونگ کا پروگرام سے دریائے یمنا کے آبگیر علاقوں کو نقصان پہنچے گا جیسا کہ اکشرادھام مندر اور دولت مشترکہ کھیلوں کے وقت ہوا تھا۔ نائب صدر نشین مسٹر پی جے کورین نے کہا کہ یہ معاملہ عدالت میں زیر سماعت ہے میں کچھ نہیں کرسکتا جبکہ تم لوگوں ( اپوزیشن ) نے کوئی نوٹس بھی نہیں دی۔ دریں اثناء ترون وجئے ( بی جے پی) نے کہا کہ کانگریس اکشرادھام مندر کی تعمیر کی مخالفت کے بعد اب کلچرل فیسٹول کے خلاف ہوگئی ہے جس پر مملکتی وزیر پارلیمانی اُمور مختار عباس نقوی نے کہا کہ یہ ایک خالص تہذیبی میلہ ہے جس پر وزیر اعظم بھی شرکت کریں گے۔ انہوں نے احتجاجی ارکان سے کہا کہ’’ میں بھی جارہا ہوں، تم بھی چلو۔‘‘ اور یہ ادعا کیا کہ روحانی پیشوا ماحولیات کے بارے میں حساس ہوتے ہیں لہذا اس طرح کے پروگرام کو سیاسی رنگ نہ دیا

TOPPOPULARRECENT