Tuesday , August 22 2017
Home / شہر کی خبریں / وائس چانسلر اپا راؤ کی برطرفی کا مطالبہ

وائس چانسلر اپا راؤ کی برطرفی کا مطالبہ

طلباء پر لاٹھی چارج اور پولیس کے رویہ کی مذمت: کانگریس
حیدرآباد۔/23مارچ، ( سیاست نیوز) صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی کیپٹن اتم کمار ریڈی نے کہا کہ بی جے پی اور ٹی آر ایس حکومتوں کی فاشست پالیسیوں کی وجہ سے کل حیدرآباد سنٹرل یونیورسٹی اور آج عثمانیہ یونیورسٹی میں بدبختانہ واقعات پیش آئے ہیں۔ انہوں نے اپا راؤ کو وائس چانسلر کے عہدہ سے برطرف کرنے اور انہیں فوری گرفتار کرنے کا مطالبہ کیا۔ اس موقع پر انہوں نے حدود پار کرنے کے خلاف پولیس کو انتباہ دیا۔ آج گاندھی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں یہ بات بتائی۔ اس موقع پر ورکنگ پریسیڈنٹ تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی، ارکان اسمبلی رام موہن ریڈی، سمپت کمار، ومشی چندریڈی، تلنگانہ یوتھ کانگریس کے صدر انیل کمار یادو اور آل انڈیا این ایس یو آئی کے صدر روزی جان بھی موجود تھے۔ کیپٹن اتم کمار ریڈی نے ایس سی، ایس ٹی ایکٹ کے تحت مقدمہ درج ہونے کے باوجود پولیس کی جانب سے وائس چانسلر حیدرآباد سنٹرل یونیورسٹی اپا راؤ کو گرفتار نہ کرنے پر حیرت کا اظہار کیا اور کہا کہ روہیت ویمولہ کی موت کے ذمہ دار رہنے والے وائس چانسلر کے خلاف احتجاج کرنے پر پولیس نے طلبہ پر بے تحاشہ لاٹھی چارج کیا اور طلبہ کو غیرقانونی طور پر پولیس اسٹیشن میں حراست میں رکھا اور ان کے سیل فون چھین کر توڑ دیئے گئے حد تو یہ ہے کہ طلباء کے والدین اور سرپرستوں کو طلبہ کو حراست میں لینے کی اطلاع نہیں دی گئی اور نہ ہی انہیں مجسٹریٹ کے روبرو پیش کیا گیا ،جس کی کانگریس پارٹی سخت مذمت کرتی ہے۔ کانگریس کے ایک وفد نے آج ڈی جی پی سے ملاقات کرتے ہوئے ایچ سی یو اور عثمانیہ یونیورسٹی واقعات میں پولیس کی ہٹ دھرمی کی شکایت کی گئی ہے۔ انہوں نے پولیس کے جانبدارانہ رول کی مذمت کرتے ہوئے انہیں حدود پارکرنے کے خلاف سخت انتباہ دیتے ہوئے کہا کہ کانگریس پارٹی انصاف کیلئے انسانی حقوق کمیشن اور عدلیہ سے بھی رجوع ہوگی۔ بی جے پی اور اے بی وی پی حیدرآباد سنٹرل یونیورسٹی میں بیجا مداخلت کرتے ہوئے کشیدگی پیدا کررہی ہے اور تعلیمی ماحول کو پُرتشدد واقعات میں تبدیل کیا جارہا ہے۔ کانگریس پارٹی یونیورسٹیز میں مرکزی حکومت اور بی جے پی کی بڑھتی ہوئی مداخلت پر تشویش کا اظہار کیا اور کہا کہ آر ایس ایس نظریات سے اتفاق نہ کرنے والوں پر ظلم ڈھایا جارہا ہے اور سیکولرازم کی فضاء کو مکدر کرنے کیلئے ہر ممکن کوشش کی جارہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT