Wednesday , August 23 2017
Home / شہر کی خبریں / وائی ایس آر کانگریس کی تحریک عدم اعتماد کو شکست

وائی ایس آر کانگریس کی تحریک عدم اعتماد کو شکست

عدلیہ کے خلاف جگن کے ریمارکس پر اے پی اسمبلی میں ہنگامہ آرائی ‘ نائیڈو کی سخت برہمی
حیدرآباد۔14 مارچ ( پی ٹی آئی ) آندھراپردیش قانون ساز اسمبلی میں عدلیہ کے خلاف اپوزیشن لیڈر وائی ایس جگن موہن ریڈی کے بعض انتہائی تلخ ریمارکس کے سبب زبردست شوروغل و ہنگامہ آرائی ہوئی ۔ حکمراں تلگودیشم ۔ بی جے پی اتحاد نے ان ریمارکس پر جگن سے معذرت خواہی کا مطالبہ کیا  ۔ بحث کے بعد حکومت کے خلاف وائی ایس آر کانگریس کی طرف سے حکومت کے خلاف یپش کردہ تحریک عدم اعتماد مسترد کردی گئی ۔ جگن اگرچہ اپنے موقف پر مضبوط رہے لیکن چیف منسٹر این چندرا بابو نائیڈو نے جگن کے ریمارکس کو مقننہ کے چہرہ پر ایک بدنما داغ قرار دیا ۔ وزیر فینانس وائی رام کرشنوڈو نے جگن کی سخت مذمت کرتے ہوئے کہا کہ وہاس ایوان کے رکن رہنے کے قابل نہیں ہیں ۔ تاہم جگن نے اپنے ریمارکس پر وضاحت کی کوشش کے طور پر دعویٰ کیا کہ انہوں نے عام طور پر انتظامی طریقہ کار کے خلاف تبصرے کئے ہیں اور بالخصوص عدلیہ یا ججوں کے بارے میں کوئی ریمارک نہیں کیا لیکن وزیر اُمور مقننہ نے ان کے دعوے کی قلعی کھولتے ہوئے جگن کی تقریر کا ریکارڈ پیش کردیا جس میں انہوں نے چندرا بابو نائیڈو کے حق میں ایک عدالتی فیصلے کا واضح طور پر حوالہ دیا تھا ۔ جگن نے نائیڈو حکومت کی 21ماہ قدیم حکومت کے خلاف سلسلہ وار الزامات عائد کرتے ہوئے تحریک عدم اعتماد پیش کی تھی جس کو ندائی ووٹ کے ذریعہ بھاری اکثریت سے مسترد کردیا ۔ جگن کے مبینہ نازیبا ریمارکس پر نائیڈو نے شدید برہمی کے ساتھ ردعمل کا اظہار کیا ۔ نائیڈو نے ایوان میں جگن سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا کہ ’’ آپ کے والد ( آنجہانی وائی ایس راج شیکھر ریڈی) نے اپنے 10سالہ اقتدار میں میرے خلاف 26مقدمات عائد کئے تھے اور 10تحقیقات کا آغاز کیا تھا لیکن حتمی طور پر کوئی الزام ثابت نہیں کرسکے تھے ۔ درحقیقت انہوں نے ( وائی ایس راج شیکھر ریڈی) نے عدالتوں میں میرے خلاف دائر کردہ چند مقدمات کو واپس لے لیا تھا ۔

TOPPOPULARRECENT