Saturday , October 21 2017
Home / ہندوستان / وادی کشمیر میں بحالی امن کیلئے مرکز کی ہر ممکن کوششیں جاری

وادی کشمیر میں بحالی امن کیلئے مرکز کی ہر ممکن کوششیں جاری

نئی دہلی 11 جولائی ( سیاست ڈاٹ کام ) مرکزی حکومت وادی کشمیر میں امن کو بحال کرنے کیلئے ہر ممکن اقدامات کر رہی ہے جہاں حزب المجاہدین کے کارکن برہان وانی کی ہلاکت پر بڑے پیمانے پر احتجاج کا سلسلہ چل رہا ہے ۔ مرکزی وزیر ہنس راج گنگا رام آہیر نے یہ بات بتائی ۔ منسٹر آف اسٹیٹ داخلہ کی حیثیت سے عہدہ کی ذمہ داری سنبھالنے کے بعد آہیر نے اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ مرکزی حکومت چاہتی ہے کہ جتنا جلد ممکن ہوسکے جموں و کشمیر میں امن بحال ہوجائے اور اس کیلئے حکومت کی جانب سے ہر ممکن اقدامات بھی کئے جا رہے ہیں۔ ومیر موصوف نے کہا کہ وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ وادی کی صورتحال پر شخصی طور پر نظر رکھے ہوئے ہیں اور انہوں نے عہدیداروں کو ہدایت دی ہے کہ وہ نیم فوجی دستوں کی جانب سے ریاستی حکومت کو ہرممکن مدد کی فراہمی کو یقینی بنائیں تاکہ وادی میں امن اور عام حالات کو بحال کیا جاسکے ۔ وادی میں گذشتہ دنوں سے جاری احتجاج میں کئی افراد ہلاک ہوچکے ہیں اور سکیوریٹی فورسیس کے ساتھ ان کی جھڑپیں ہو رہی ہیں۔ آہیر نے کہا کہ راج ناتھ سنگھ وادی کی صورتحال پر مختلف سیاسی جماعتوں کے قائدین سے بات کرنے کا منصوبہ رکھتے ہیں جہاں کم از کم 23 افراد اب تک ہلاک ہوچکے ہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ راج ناتھ سنگھ اس مسئلہ پر فکرمند ہیں اور وہ اب تک کانگریس کی صدر سونیا گاندھی اور سابق چیف منسٹر عمر عبداللہ سے بھی بات چیت کرچکے ہیں۔ آہیر نے تاہم اس سوال کا کوئی واضح جواب دینے سے گریز کیا کہ آیا وادی کشمیر میں جو صورتحال ہے اس سے ٹھیک طرح سے نمٹا جا رہا ہے یا نہیں۔ آہیر چار مرتبہ کے رکن پارلیمنٹ ہیں اور داخلہ کا قلمدان سنبھالنے سے قبل وہ مسنٹر آف اسٹیک کمیکلز و فرٹیلائزرس تھے ۔ اس دوران سابق چیف منسٹر جموں و کشمیر عمر عبداللہ نے آج کہا کہ انہوں نے مرکزی حکومت سے کہا ہے کہ وادی میں تشدد اس وقت تک نہیں رکے گا جب تک سکیوریٹی فورسیس احتجاجیوں کی ہلاکتوں کو روکنے انتہائی صبر و تحمل کا مظاہرہ نہیں کرینگی ۔ انہوں نے اپنے ٹوئیٹر پر کہا کہ وزیر داخلہ راج ناتھ سنگھ نے ان سے آج صبح بات کی ہے ۔ میں نے ان سے کہا کہ سکیوریٹی فورسیس کو انتہائی صبر و تحمل سے کام لینا چاہئے تاکہ احتجاجیوں کے جانی نقصان کو ٹالا جاسکے ۔ جب تک سکیوریٹی فورسیس ایسا نہیں کرینگی تشدد کا سلسلہ رکنے والا نہیں ہے ۔ انہوں نے کہا کہ وادی کو موجودہ صورتحال سے اسی وقت نکالا جاسکتا ہے جب وہاں ہلاکت خیز طاقت کا استعمال روکا جائے ۔ انہوں نے وادی میں حالات کو معمول پر لانے ہر ممکن تعاون کا تیقن دیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT