Sunday , October 22 2017
Home / ہندوستان / واراناسی میونسپل کارپوریشن میں وندے ماترم کے لزوم پر تنازعہ

واراناسی میونسپل کارپوریشن میں وندے ماترم کے لزوم پر تنازعہ

بی جے پی کارپوریٹر کی تجویز پر میئر کے احکام جاری ، کانگریس اور ایس پی کا احتجاج ، ایوان سے واک آؤٹ

واراناسی ۔ 3 اپریل ۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) واراناسی کے میئر نے احکام جاری کرتے ہوئے اس میونسپل کارپوریشن کے ہر رکن پر ’’وندے ماترم‘‘ اور ’’جن گن من ‘‘ گانے کا لزوم عائد کردیا ہے ۔ قبل ازیں بی جے پی کے ایک کارپوریٹر نے یہ ترانے گانے کی ایک تجویز پیش کی تھی جس کے ساتھ ہی کانگریس اور ایس پی کے ارکان نے احتجاج شروع کردیا ۔ یہ تنازعہ ہفتہ کو شروع ہوا جب بی جے پی کے کارپوریٹر اجئے گپتا نے تجویز پیش کی کہ ایوان کی کارروائی کے آغاز سے قبل قومی ترانہ گایا جائے ۔ کانگریس اور ایس پی ارکان کے احتجاج کا سخت نوٹ لیتے ہوئے میئر رام گوپال موہالے نے آج اپنے ایک بیان میں کہا کہ قومی ترانہ کی مبینہ توہین اور ناشائستہ نعرہ بازی پر ایس پی اور کانگریس ارکان کے خلاف کارروائی کی جائے گی ۔ سماج وادی پارٹی کے کارپوریٹر روی کانت وشواکرما نے پی ٹی آئی سے کہا کہ ’’ہم سب 2017-18 کے بجٹ پر ہفتہ کو بحث کیلئے تیار ہوچکے تھے لیکن بی جے پی کارپوریٹر اجئے گپتا نے حیرت انگیز طورپر مداخلت کرتے ہوئے کہا کہ ایوان کی کارروائی کے آغاز سے قبل قومی گیت وندے ماترم گایا جائے جس پر ایس پی اور کانگریس کے مسلم اور چند ہندو کارپوریٹرس نے سخت احتجاج کیا ۔ وشواکرما نے مزید کہا کہ ’’ہم اپنے قومی گیت کا مکمل احترام کرتے ہیں لیکن اس کے گانے کیلئے بی جے پی ہمیں مجبور نہیں کرسکتی ۔ ہماری جماعت ایس پی کے علاوہ کانگریس کے مسلم کارپوریٹرس اس اقدام کے شدید مخالف ہیں۔ اگر ہم یہ ترانہ گانا نہیں چاہتے تو وہ ( بی جے پی) دانستہ طورپر مسلط نہیں کرسکتی ‘‘۔ ذرائع نے کہاکہ اس اقدام پر اپوزیشن نے جن میں بی ایس پی ارکان بھی شامل تھے احتجاج اور نعرہ بازی کی ۔ انھوں نے کہا کہ زعفرانی جماعت دانستہ طورپر ایک نئی روایت مسلط کررہی ہے ۔ ایوان میں اس مسئلہ پر ہنگامہ آرائی کے بعد میئر نے حکم جاری کیا جس میں کہا گیا ہے کہ قومی گیت وندے ماترم کے لازمی طورپر گائے جانے کے بعد ہی ایوان کی کارروائی شروع ہونی چاہئے اور اجلاس کے اختتام پر قومی ترانہ ’جن گن من ‘ گایا جائے ۔ موہالے نے کہاکہ قومی ترانہ گانے سے حب الوطنی کے جذبات و احساسات اُجاگر ہوتے ہیں اور ماضی میں بھی ایوان میں وندے ماترم گائے جانے کی روایت رہی ہے ۔ موہالے نے اپنے بیان میں کہا کہ ’’ایوان میں چند کارپوریٹرس نے آر ایس ایس کے خلاف اہانت آمیز تبصرے کے اور نعرہ بازی کی ۔ یہ تنظیم ( آر ایس ایس ) مکمل طورپر قوم کے لئے وقف ہوچکی ہے ۔ یہ نہ صرف توہین آمیز بلکہ مجرمانہ حرکت ہے ‘‘ ۔ وندے ماترم گاندھی کے مسئلہ پر حال ہی میں میرٹھ میونسپل کارپوریشن میں بھی تنازعہ پیدا ہوا تھا جہاں ارکان کی طرف سے وندے ماترم گانا شروع کرتے ہی مسلم ارکان ایوان سے باہر چلے گئے تھے جس کے خلاف کارروائی کرتے ہوئے ان کی رکنیت برخاست کرنے کی ایک قرارداد منظور کی گئی تھی ۔ میرٹھ کے میئر ہری کانت اہلوالیہ نے یہ تجویز پیش کرتے ہوئے کہا تھا کہ وندے ماترم کی مخالفت کرنے والے کسی بھی رکن کا ایوان میں خیرمقدم نہیں کیا جائے گا ۔

TOPPOPULARRECENT