Friday , April 28 2017
Home / سیاسیات / واراناسی کے مسلمان بی جے پی سے ناراض ، مودی پر تنقید سے گریز

واراناسی کے مسلمان بی جے پی سے ناراض ، مودی پر تنقید سے گریز

’’بی جے پی ہمیں پسند نہیں کرتی ، ایک بھی مسلم کو ٹکٹ نہیں دیا تو ہم ووٹ کیوں دیں ‘‘؟مسلمانوں کا سوال

واراناسی ۔ /5 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) بنارسی ساڑیوں کیلئے معروف پارچہ بافی و بنکری کے عالمی شہرت یافتہ مرکز واراناسی (بنارس) میں مسلمانوں کی ایک بڑی تعداد یہ محسوس کرتی ہے کہ ’’اگر واراناسی ترک کرے گا تو ہم بھی ترک کریں گے ‘‘ ۔ اس شہر کے اکثرت مسلمانوں نے وزیراعظم نریندر مودی پر کھل کر تنقید اور مخالفت کرنے سے بھی گریز کیا ۔ اگرچہ لوک سبھا میں حلقہ واراناسی کی نمائندگی کرنے والے نریندر مودی کی چار طرف سے نوٹ بندی کے سبب بنارسی ساڑیوں کا کاروبار بھی کافی متاثر ہوا ہے ۔ چنانچہ اکثر مسلم بُنکر و بافندگان بی جے پی کی پالیسیوں سے خوش نہیں ہیں ۔ علاوہ ازیں دیرینہ اختلاف و مخاصمت نے بھی مسلم برادری اس زعفرانی جماعت کے درمیان تقسیم اور خلیج کی ایک گہری لکھیر کھینچی ہے ۔ بنارسی دستکاری کے ایک سرکردہ ڈیلر عبدالرؤف بالخصوص دستکاروں کے مسائل سے نمٹنے میں وزیراعظم کے طریقہ کار سے ناراض و ناخوش ہیں پھر بھی ان کا کہنا ہے کہ ہنوز ان سے اچھی امیدیں رکھتے ہیں ۔ عبدالرؤف نے بنارس کی مشہور ریشمی ساڑیوں کا تذکرہ کیا جس کی صنعت پر ہنوز اس اقلیتی طبقہ کو بالادستی حاصل ہے ۔ تاہم واراناسی کے اکثر مسلمانوں سے مودی پر اس اندازمیں تنقید کرنے سے گریز کیا جیسا وہ دیگر مقامات پر کیا کرتے ہیں ۔ مدنپورہ میں بنارسی ساڑیوں کے ایک بزرگ تاجر 70 سالہ رفیق احمد نے کہا کہ ’’(مودی) ہمارے وزیراعظم ہیں ۔ بنارس ترقی کرے گا تو ہم بھی ترقی کریں گے ۔ لیکن بی جے پی والے ہمیں پسند نہیں کرتے ‘‘ ۔ مودی کے اس حلقہ میں 20 فیصد مسلمان ہیں جو ایسا محسوس ہوتا ہے کہ مضبوطی کے ساتھ سماج وادی پارٹی  ۔ کانگریس کے ساتھ ہیں ۔ چنانچہ /8 مارچ کو یہاں آخری مرحلہ کی رائے دہی کے موقع پر مسلم ووٹوں کی تقسیم کے اندیشے عملاً ختم ہوگئے ہیں ۔ 2012 ء کے انتخابات کے دوران مسلم ووٹوں کی تقسیم میں اس شہر کے تمام تین حلقوں میں بی جے پی کی کامیابی کا سبب بنی تھی ۔ اس سوال پر کہ آیا آپ مودی کو ووٹ دیں گے ۔ جنہوں نے ہفتہ کو بعض مسلم اکثریتی محلہ جات میں بھی روڈ شو کیا تھا ۔ چند نوجوانوں نے جھنجلاتے ہوئے جواب دیا کہ ’’یو پی میں بی جے پی نے کتنے مسلمانوں کو امیدوار بنایا ہے ؟…ایک بھی نہیں تو پھر ہم ووٹ کیوں دیں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT