Sunday , June 25 2017
Home / Top Stories / ’واہ کیا شعرہے‘! کھرگے کے ریمارک پر مودی کا طنز

’واہ کیا شعرہے‘! کھرگے کے ریمارک پر مودی کا طنز

نئی دہلی، 7 فروری (سیاست ڈاٹ کام) وزیر اعظم نریندر مودی نے آج ملک کی جمہوریت کو ایک سیاسی خاندان کو وقف کردینے پر کانگریس کو لتاڑتے ہوئے کہاکہ جن لوگوں نے 1970کی دہائی میں جمہوریت کو تباہ کرنے کی کوشش کی تھی، وہ عوام کی طاقت کو نہیں سمجھ پائے تھے ۔صدر کے خطبے پر شکریہ کی تحریک پر ہونے والی بحث کا جواب دیتے ہوئے مسٹر مودی نے آج لوک سبھا میں کہا کہ یہ عوامی طاقت کا ہی نتیجہ ہے کہ آج ایک غریب ماں کا بیٹا ملک کا وزیر اعظم ہے ۔ شکریہ کی تحریک پر بحث کل رات مکمل ہوئی تھی۔مودی نے ‘جمہوریت’ اور سیاسی خاندان کے حوالے سے جو باتیں کہیں اس کا ربط کانگریس کے لیڈر ایم ملک ارجن کھرگے کے کل کے اس بیان سے ملتا ہے جس میں انہوں نے کہا تھاکہ کانگریس کی وجہ سے اس ملک میں جمہوریت زندہ ہے اور جمہوریت ہی کی وجہ سے مودی وزیر اعظم بن پائے ہیں۔مودی نے کہا ”کانگریس کی طرف سے ہم برسوں سے بس یہی سن رہے ہیں کہ ‘صرف ایک خاندان’ نے ملک کو آزادی دلائی ہے ۔انہوں نے کہا ” کیا ہم بھگت سنگھ اور چندر شیکھر کی خدمات کے بارے میں کبھی سنتے ہیں ”۔کانگریس فلور لیڈر کھرگے کے اس بیان کا مضحکہ اڑاتے ہوئے کہ ”جمہوریت کی بقا کانگریس کی وجہ سے ہے ” مودی نے اپنے مخصوص انداز میں کہا ”واہ کیا شعر ہے ”۔ ”یہ واقعی آپکی پارٹی کا بڑا احسان ہے کہ جمہوریت کو زندہ رکھا گیا” انہوں نے طنز کیا اور 1975 کی ایمرجنسی کے واقعہ کو یاد کرتے ہوئے کہا ” یہ کانگریس پارٹی ہے جس نے جمہوریت کو ایک خاندان کے مفادات کے تحفظ کے لئے ”وقف ” کردیا۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT