Saturday , August 19 2017
Home / Top Stories / وجئے ملیا کیخلاف حیدرآباد کی عدالت کا ناقابل ضمانت وارنٹ جاری

وجئے ملیا کیخلاف حیدرآباد کی عدالت کا ناقابل ضمانت وارنٹ جاری

قرض دانستہ نادہندگان کے خلاف کارروائی :حکومت ، ملک واپس نہ ہونے شراب کے تاجر کا ارادہ
حیدرآباد؍ نئی دہلی۔ 13 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) شراب کے پریشان حال تاجر وجئے ملیا کی پریشانیوں میں مزید اضافہ ہوگیا جب حیدرآباد کی ایک عدالت نے ان کے خلاف ناقابل ضمانت وارنٹ جاری کردیا کیونکہ 50 لاکھ روپئے کا ایک چیک مسترد کئے جانے سے متعلق مقدمہ کی سماعت کیلئے وہ وارنٹ جاری کئے جانے کے باوجود حاضر نہیں ہوتے تھے۔ اس دوران ان کے حوالے سے یہ اطلاعات بھی موصول ہورہی ہیں کہ ان کی ہندوستان واپسی کیلئے یہ صحیح وقت نہیں ہے۔ جی ایم آر انٹرنیشنل ایرپورٹ کے نام وجئے ملیا کی جانب سے جاری کردہ 50 لاکھ روپئے کا چیک باؤنس ہوگیا تھا۔ بعدازاں جی ایم آر نے حیدرآباد کی ایک عدالت میں ان کے خلاف مقدمہ دائر کیا تھا۔ 60 سالہ وجئے ملیا مختلف بینکوں سے حاصل کردہ 9,000 کروڑ روپئے کے قرضوں کی نادہندگی کے ضمن میں کئی سطحوں پر قانونی و انتظامی کشاکش کا سامنا کررہے ہیں۔ اس دوران انہوں نے یکم مارچ کو راجیہ سبھا کے اجلاس میں شرکت کی اور دوسرے روز کے مارچ کو ان کے ملک سے فرار ہوکر لندن پہونچنے کی خبریں منظر عام پر آئیں جس کے نتیجہ میں ان کی بدعنوانیوں کی تحقیقات متاثر ہوئیں اور ایک بڑا سیاسی تنازعہ بھی پیدا ہوگیا ہے جس کے پیش نظر مملکتی وزیر فینانس جیئنت سنہا نے آج کہا کہ قرضوں کی ادائیگی میں دانستہ کوتاہی کرنے والے تمام قصورواروں کے خلاف قانون کی پوری قوت کا استعمال کرتے ہوئے انہیں انصاف کے کٹھہرے میں لایا جائے گا۔ حیدرآباد میں 14 ویں ایڈیشنل چیف میٹرو پولیٹن مجسٹریٹ نے ملیا کی (کنگ فشر) ایرلائینس کمپنی کے نام 10 مارچ کو ناقابل ضمانت وارنٹ جاری کیا تھا۔ اس مقدمہ کی آئندہ سماعت 13 اپریل کو مقرر کی گئی ہے۔ جی ایم آر کے وکیل جی اشوک ریڈی نے کہا کہ اس ادارہ کو 8 کروڑ روپئے کے بقایاجات کی ادائیگی کے ضمن میں وجئے ملیا کے ادارہ کے خلاف 11 مقدمات درج ہیں اور 50 لاکھ روپئے کے چیک باؤنس سے متعلق ایک مقدمہ میں ملیا کے خلاف ناقابل ضمانت دانستہ جاری کیا گیا ہے۔
وجئے ملیا کے وکیل ایچ سدھاکر راؤ نے کہا کہ ان کے خلاف جاری ناقابل ضمانت وارنٹ کو کالعدم کرنے کیلئے وہ ہائیکورٹ میں ایک درخواست دائر کریں گے۔ اس دوران وجئے ملیا نے کہا ہے کہ ان کی ہندوستان واپسی کیلئے فی الحال صحیح وقت نہیں ہے۔ لندن میں مقیم ملیا نے ’’سنڈے گارجین‘‘ کو ای۔میل پر دیئے گئے ایک انٹرویو میں ایک سوال پر جواب دیا کہ ’’بنیادی طور پر میں ایک ہندوستانی ہوں۔ بے شک میں اپنے وطن واپس ہونا چاہتا ہوں۔(لیکن) مجھے یہ یقین نہیں ہے کہ مجھے اپنا مقدمہ پیش کرنے کا منصفانہ موقع حاصل ہوگا چنانچہ میں محسوس کرتا ہوں کہ (واپسی کیلئے) یہ صحیح وقت نہیں ہے‘‘۔ ہزاروں کروڑ روپئے کے قرضوں میں ڈوبے ہوئے ارب پتی تاجر نے ٹوئٹر پر لکھا کہ برطانیہ میں بھی میڈیا کی طرف سے میرا پیچھا کیا جارہا ہے۔ افسوس کی بات ہے کہ وہ صحیح مقام پر نظر نہیں آتے۔ بہرحال میں میڈیا سے بات نہیں کروں گا چنانچہ آپ (میڈیا) اپنا وقت برباد نہ کریں‘‘۔

TOPPOPULARRECENT