Tuesday , October 24 2017
Home / کھیل کی خبریں / ورلڈ ٹی ٹوئنٹی سے قبل پاکستانی ٹیم اور بورڈ میں اختلافات

ورلڈ ٹی ٹوئنٹی سے قبل پاکستانی ٹیم اور بورڈ میں اختلافات

لاہور ، 9 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) ہندوستان میں ورلڈ ٹی ٹوئنٹی سے قبل پاکستان کرکٹ ٹیم اور پی سی بی کے اندر اختلافات سامنے آ رہے ہیں۔ ایک طرف جہاں ٹیم کے کپتان شاہد آفریدی اور ہیڈ کوچ وقار یونس کے درمیان اختلافات کے واضح اشارے ملے ہیں تو وہیں دوسری طرف معلوم ہوا ہے کہ پی سی بی کی دو اعلیٰ شخصیات میں بھی اتفاق رائے نہیں۔ چیف سلیکٹر ہارون رشید نے پیر کو مصنوعی مسکراہٹ کے ساتھ ورلڈ ٹی ٹوئنٹی اسکواڈ میں ترامیم کا اعلان کیا تھا۔ تاہم، باخبرذرائع بتاتے ہیں کہ ٹیم کی روانگی سے قبل معاملات درست نہیں۔ ان ذرائع کے مطابق، وقار نے شہریار سے تفصیلی ملاقات کے دوران نیشنل سلیکٹرز کے کام پر اعتراضات کے علاوہ آفریدی کی بھی شکایت کی۔ وقار سے ملاقات کے بعد شہریار خان نے منگل کو لاہور میں آفریدی سے ملاقات کے دوران ایشیا کپ میں ٹیم کی خراب پرفارمنس پر استفسار نہیں کیا۔ ایک اور ذریعہ نے بتایا کہ وقار اور چیف سلیکٹر نے جس طرح سلمان بٹ کی اسکواڈ میں واپسی پر اپنے خیالات ظاہر کئے اس پر آفریدی خوش نہیں۔ ’آفریدی اس بات پر ناراض ہیں کہ انہیں بتائے بغیر سلمان کی واپسی کا معاملہ اٹھایا گیا۔ بعد ازاں اسٹار آل راؤنڈر نے بورڈ کے رابطہ کرنے پر واضح کر دیا کہ اگر سابق کپتان کو اسکواڈ میں واپس بلایا گیا تووہ کھیلنے سے انکار کر سکتے ہیں‘۔

ذریعہ نے بتایا کہ وقار ایشیا کپ کے دوران دو آپشنل پریکٹس سیشنز میں آفریدی کی غیرحاضری اور قطعی گیارہ کے انتخاب کے کچھ معاملات پر خوش نہیں۔ دوسری جانب وقار کے بارے میں شکایت آئی ہے کہ وہ کھلاڑیوں سے بہت زیادہ پریکٹس کرواتے اور انہیں آرام کا موقع نہیں دیتے۔ 2011ء میں بھی دورۂ ویسٹ انڈیز کے موقع پر ٹیم سلیکشن کے معاملات پر آفریدی اور وقار کے درمیان اختلافات ابھرنے کے بعد بالآخر پی سی بی نے آل راؤنڈر کو ونڈے اور ٹی ٹوئنٹی کپتانی سے ہٹا دیا تھا۔ ایک اور ذریعہ نے بتایا کہ ٹیم کے علاوہ بورڈ میں بھی اعلیٰ سطح پر اختلافات پائے جاتے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ شہریار اور طاقتور ایگزیکٹیو کمیٹی کے سربراہ نجم سیٹھی کے خیالات میں مطابقت نہیں۔ ’’در اصل نجم چاہتے ہیں کہ شہر یار ایشیا کپ کے بعد کپتان، ہیڈ کوچ اور ٹیم انتظامیہ کو برطرف کر دیں۔ تاہم شہریار فوری تبدیلیوں کے خلاف ہیں‘‘۔ اسی طرح دونوں شخصیات میں ٹیم کو ورلڈ ٹی ٹوئنٹی کیلئے ہندوستان بھیجنے پر بھی اختلافات پائے جاتے ہیں۔ پی سی بی کے اندرونی مسائل یہیں ختم نہیں ہوتے کیونکہ شہریار چیف سلیکٹر ہارون کے کام کرنے کے طریقے سے خوش نہیں تو دوسری جانب نجم سیٹھی چیف سلیکٹر کی حمایت میں کھڑے ہیں۔ ہارون بورڈ میں اپنی نوکری کھونے والے ہیں لیکن نجم سیٹھی چاہتے ہیں کہ انہیں چیف سلیکٹر کے عہدہ سے برطرف کرنے کے بعد بورڈ میں ہی کوئی اور ذمہ داری دی جائے۔ ذرائع نے یہ بھی تصدیق کی کہ شہریار ورلڈ ٹی ٹوئنٹی کے بعد کسی غیر ملکی کوچ کی خدمات حاصل کرنے کے حق میں ہیں۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT