Wednesday , August 23 2017
Home / اضلاع کی خبریں / ورنگل میں مسلمانوں کو بادشاہ گر کا موقف حاصل

ورنگل میں مسلمانوں کو بادشاہ گر کا موقف حاصل

قاضی پیٹ۔11نومبر ( سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) بہار اسمبلی کے نتائج کے بعد اب تمام سیاسی جماعتوں میں ہلچل مچی ہوئی ہے ‘ ایک طرف بھارتیہ جنتا پارٹی نے بہار میں 150 سے زائد نشستیں حاصل کرنے کا دعویٰ کیا تھا تاہم جنتادل ۔ آر جے ڈی نے شاندار کامیابی حاصل کی ۔ ضلع ورنگل میں اسماہ کی 21 تاریخ کو پارلیمنٹ کا ضمنی چناؤ منعقد ہورہا ہے ۔ 23نومبر کو نتائج کا اعلان کیا جائے گا ۔ مقابلہ میںکانگریس امیدوار سروے ستیہ نارائن ‘ ٹی آر ایس امیدوار ای دیاکر ‘ وائی ایس آر امیدوار کے علاوہ بی جے پی امیدوار چنتلا رامچندر ریڈی ‘ بائیں بازو امیدوار گالی ونود کمار اپنی اپنی کامیابی کیلئے ابھی سے ہی انتخابی سرگرمیوں کا آغاز کردیا ہے ۔ کُل ملاکر اس ضمنی چناؤ میں پانچ اہم پارٹیوں کے امیدوار مقابلہ کریں گے ۔ ضلع ورنگل کے پارلیمان حلقہ میں کُل ملاکر 15لاکھ سے زائد رائے دہندوں کی تعداد ہے جبکہ ایس سی طبقات کے 15فیصد ووٹس ہیں ‘کسی بھی امیدوار کو کامیابی کیلئے 3لاکھ سے زائد ووٹس حاصل کرنا چاہیئے ۔ کسی بھی امیدوار کی کامیابی صرف مسلمانوں کے فیصلہ کن ووٹس سے ہیہوگی ۔ ضلع ورنگل میںمسلمانوں کے کُل ملاکر 1,90,000 ووٹس شامل ہیں ۔ اگر مسلمان ایک جٹ ہوکر کسی ایک امیدوار کے حق میں ووٹ استعمال کریں گے تو وہی امیدوار کامیاب ہوگا ۔ تمام سیاسی جماعتوں کی نظر صرف مسلم ووٹوں پر لگیہوئی ہے ۔ سیاست کی جانب سے چلائی جانے والی 12فیصد تحفظات کی مہم کا سیاسی پارٹیوں پر کافی اثر ہوگا ۔ گذشتہ انتخابات میں ٹی آر ایس حکومت نے مسلمانوں کو 12فیصد تحفظات کا اعلان کیا تھا تاہم اس پر کوئی عمل آوری نہیں کی گئی ۔بعدازاں روزنامہ ’’سیاست‘‘ بالخصوص میناریٹی ویلفیر پارٹی کی جانب سے 12فیصد تحفظات کیلئے مہم کا آغاز کیا گیا ہے ۔ جس سے سارے مسلمانوں میں شعور بیداری پیدا ہوگئی ہے ۔ اب ٹی آر ایس حکومت کے حق میں مسلمان ووٹ نہ ڈالنے کا فیصلہ کیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT