Friday , October 20 2017
Home / ہندوستان / ورکرس کی اقل ترین تنخواہوں میں اضافہ کی مخالفت

ورکرس کی اقل ترین تنخواہوں میں اضافہ کی مخالفت

دہلی میں صنعت کاروں اور تاجروں کی جانب سے ہڑتال کی دھمکی
نئی دہلی 17 اگسٹ (سیاست ڈاٹ کام) اقل ترین اجرتوں میں 50 فیصد اضافہ کے لئے عام آدمی پارٹی حکومت کا فیصلہ قبول کئے جانے کے امکانات مشکل نظر آرہے ہیں کیوں کہ پارٹی کے ٹریڈ ونگ نے آج ہڑتال کی دھمکی دی اور یہ ادعا کیا ہے کہ صنعتیں بند ہوجانے (لے آف) اور کاروبار متاثر ہوجانے کا خطرہ ہے۔ تنظیم نے کہاکہ یہ فیصلہ غیر منصفانہ ہے اور یہ مسئلہ لیفٹننٹ گورنر نجیب جنگ سے رجوع کیا جائے گا۔ ٹریڈ اسوسی ایشنس کے اجلاس کے بعد مسٹر برجیش مصرا کنوینر نے کہاکہ تنخواہوں پر نظرثانی کے فیصلے سے دہلی میں نہ صرف ورکروں کی چھٹی کردینی پڑے گی بلکہ صنعت اور تجارت کو مکمل بند کردینا پڑے گا۔ انھوں نے کل ڈپٹی چیف منسٹر منیش سسوڈیہ اور وزیر لیبر گوپال رائے سے ملاقات کرکے اپنا اعتراض جتایا۔ تاہم حکومت دہلی توقع ہے کہ تنخواہوں میں اضافہ کی تجویز کو آج منظوری دیدے گی۔ مسٹر برجیش گوئل نے کہاکہ ہم نے لیفٹننٹ گورنر سے ملاقات کے لئے وقت طلب کیا ہے جبکہ صنعت و تجارت کے نمائندگان دیگر سیاسی جماعتوں کے ٹریڈ ونگس سے بھی ملاقات کی جائے گی۔ اگر کوئی ہڑتال پر جانے کا فیصلہ کرنا ہے تو ہم بھی ایسا کرنے کے لئے مجبور ہوجائیں گے۔ انھوں نے بتایا کہ شمالی ہند بالخصوص مدھیہ پردیش اور مغربی بنگال سے تقابل کیا جائے تو دہلی میں سب سے زیادہ تنخواہیں ادا کی جاتی ہیں اور مزید تنخواہوں میں اضافہ صنعت و تجارت پر زبردست بوجھ عائد ہوگا اور مہنگائی میں بھی اضافہ ہوگا۔ واضح رہے کہ اروند کجریوال  نے یوم آزادی کی تقریب میں ورکرس کی تنخواہوں اور اُجرتوں میں اضافہ کا اعلان کیا تھا جس کے مطابق غیر ہنر مند ورکرس کی اقل ترین تنخواہ 9,568 روپئے سے 14,052 روپئے نیم ہنر مند کی تنخواہ 10,582 روپئے سے 15,471 اور ہنر مند ورکر کی تنخواہ 11,622 روپئے سے 17,033 روپئے ہوجائے گی۔

TOPPOPULARRECENT