Saturday , September 23 2017
Home / سیاسیات / وزیراعظم سے کجریوال کی ملاقات ’’سیاسی نظریات‘‘ سے بالاتر ہوکر تعاون کی خواہش

وزیراعظم سے کجریوال کی ملاقات ’’سیاسی نظریات‘‘ سے بالاتر ہوکر تعاون کی خواہش

لیفٹننٹ گورنر نجیب جنگ کے ساتھ عام آدمی پارٹی حکومت کی کشیدگی کے بشمول مختلف اُمور پر تبادلۂ خیال

نئی دہلی۔ 25 اگست ۔ ( سیاست ڈاٹ کام )چیف منسٹر دہلی اروند کجریوال نے آج وزیراعظم نریندر مودی سے ملاقات کی اور لیفٹننٹ گورنر نجیب جنگ سے ان کی حکومت کی کشیدگی کے بشمول کئی گرما گرم مسائل پر تبادلۂ خیال کیا ۔ انھوں نے ’’سیاسی نظریات‘‘ سے بالاتر ہوکر اختلافات کو درگذار کرتے ہوئے مرکز کے تعاون کی خواہش کی ۔ چیف منسٹر نے جن کے ہمراہ ان کے ڈپٹی چیف منسٹر منیش سشوڈیا بھی تھے وزیراعظم مودی سے ملاقات کی اور ان کی حکومت کے ساتھ دہلی پولیس کی جاری جنگ کے مسئلہ کو بھی اُٹھایا ۔ دہلی انسداد رشوت ستانی بیورو کے تقرر پر بھی پیدا شدہ تنازعہ کو بھی وزیراعظم کے سامنے پیش کیا ۔کجریوال نے کہاکہ ہم نے وزیراعظم سے ملاقات کی اوران سے کہا کہ دہلی کی ترقی کیلئے مرکز کا تعاون ضروری ہے ۔ یہ عوام کے بہتر مفاد میں ہے کہ مرکز دہلی حکومت سے تعاون کرے ۔ مرکز اور ریاستی حکومت کو مل جل کر کام کرنا چاہئے ۔ وزیراعظم سے ملاقات کے بعد اروند کجریوال نے اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ دونوں حکومتوں کے سیاسی نظریات کو کام کے ساتھ خلط ملط نہیں کیا جانا چاہئے ۔ یہ نہایت ہی اہم بات ہے کہ دونوں حکومتیں اپنے سیاسی اختلافات کو بالائے طاق رکھ کر کام کریں۔

میں نے وزیراعظم سے کہا کہ جب وہ گجرات کے چیف منسٹر تھے کتنی مرتبہ ریاستی حکومت کے احکام کو گورنر نے مسترد کردیا تھا ۔ اس وقت مرکز میں کانگریس کی حکمرانی تھی لیکن کتنی مرتبہ حکومت نے اپنے احکامات کے رد کئے جانے کا اعلان کیا تھا اس کی ایسی ایک بھی مثال نہیں ملتی ۔ دہلی میں حکمراں عام آدمی پارٹی کو حالیہ مہینوں میں لیفٹننٹ گورنر کے ساتھ اقتدار کی جنگ کرتے ہوئے دیکھا گیا ہے ۔ اروند کجریوال نے دہلی پولیس کا بھی مسئلہ اُٹھایا جو ان کی حکومت کے ساتھ تصادم کی راہ اختیار کئے ہوئے ہے۔ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ دہلی پولیس دہلی حکومت کے ساتھ جنگ کے موڈ میں ہے ۔ یہ جمہوریت کے لئے خطرناک ہے۔ جب یہاں ٹرانسپورٹس کی ہڑتال چل رہی تھی پولیس نے اس ہڑتال کوبھڑکانے کی کوشش کی تھی ۔ انھوں نے کہاکہ ہماری بات چیت میں اس موضوع پر بھی توجہ دی گئی کہ ایک کے بعد ایک عام آدمی پارٹی کے ارکان اسمبلی کو گرفتار کیا گیا تھا ۔ پولیس نے از خود مسائل پیدا کئے تھے ۔

اس کے نتیجہ میں دہلی کے اندر بیچینی پیدا ہوئی اور جرائم کی شرح میں بھی اضافہ ہوا ۔ اے سی بی سربراہ کے تقرر کے بارے میں بات کرتے ہوئے اروند کجریوال نے کہا کہ میں نے وزیراعظم سے کہا کہ انسدا رشوت ستانی بیورو 8 جون سے قبل تک بہتر طریقہ سے کام کررہا ہے اور اس وقت ایک بدعنوان عہدیدار جو انسداد رشوت ستانی کے سربراہ کی حیثیت سے روانہ کیا گیا ۔ میں نے وزیراعظم سے یہ بھی کہا کہ ہم سوچھ بھارت کے آپ کے خوابوں کو پورا کریں گے ۔ ایک ماہر ہندوستان اور ڈیجیٹل انڈیا کا آپ نے جو خواب دیکھا ہے اس کے لئے ہم کام کریں گے اور ہمارے اس کام سے آپ کی نیک نامی ہوگی ۔ بیرون ملک آپ کی مقبولیت میں اضافہ ہوگا ۔ ہم ہر کام کرنا چاہتے ہیں لیکن اس کیلئے ہم کو آپ کے تعاون کی ضرورت ہے ۔

TOPPOPULARRECENT