Thursday , August 24 2017
Home / Top Stories / وزیراعظم شیخ حسینہ ہندوستان کیساتھ تجارتی راہیں بڑھانے کوشاں

وزیراعظم شیخ حسینہ ہندوستان کیساتھ تجارتی راہیں بڑھانے کوشاں

بنگلہ دیش میں انفراسٹرکچر پراجکٹوں کے بشمول مختلف شعبوں میں سرمایہ لگانے کی اپیل، مزید چند معاہدوں پر دستخط
نئی دہلی 10 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) بنگلہ دیش کی کوشش ہے کہ ہندوستان کے ساتھ زیادہ سے زیادہ تجارتی راہیں کھل جائیں، بارڈر ہاٹس کو وسعت مل جائے اور وہ روٹس بھی کھول دیئے جائیں جو 1965 ء کی جنگ کے دوران بند کئے گئے تھے، دورہ کنندہ وزیراعظم شیخ حسینہ نے یہ بات کہی۔ وہ ہندوستان کے چار روزہ دورہ پر ہیں۔ اُنھوں نے ہندوستانی صنعتی گھرانوں سے اپیل کی کہ بنگلہ دیش میں سرمایہ لگائیں بالخصوص انفراسٹرکچر پراجکٹس، برقی اور توانائی، ٹرانسپورٹ، مینوفیکچرنگ، فوڈ اور اگریکلچرل پروسیسنگ سیکٹرس۔ یہاں بزنس چیمبرس کے زیراہتمام میٹنگ میں شیخ حسینہ نے کہاکہ بنگلہ دیش باہمی تجارت کے فروغ کے لئے زیادہ سے زیادہ راہوں کو کھولنے کی منصوبہ بندی کررہا ہے۔ اُنھوں نے کہاکہ باہمی تجارت کو اگلی سطح تک پہنچانے کے لئے درکار اقدامات کئے جائیں گے۔ سرمایہ کاری میں اضافہ کو یقینی بنانے کے لئے موجودہ طور پر ایک قانون وضع کیا جارہا ہے۔ میری ہندوستانی سرمایہ کاروں سے اپیل ہے کہ بنگلہ دیش میں مختلف شعبوں میں ممکنہ سرمایہ کاری پر غور کریں۔ بنگالی میں تقریر کرتے ہوئے بنگلہ دیشی وزیراعظم نے اپنی اپوزیشن پارٹیوں پر نکتہ چینی میں کہاکہ ایسے الزامات لگائے گئے کہ وہ ملک کو ہندوستان کے پاس فروخت کرنے جارہی ہیں۔ جنوبی ایشیاء کے معاشی حالات میں بہتری پر زور دیتے ہوئے شیخ حسینہ نے غربت کو ہندوستان اور بنگلہ دیش دونوں کا مشترک دشمن قرار دیا اور عوام کے لئے بہتر زندگی کو یقینی بنانے مشترک جدوجہد کی اپیل کی۔ مہمان وزیراعظم نے یہ نشاندہی بھی کی کہ علاقائی اور ضمنی علاقائی تعاون سے بھی مارکٹ کو وسعت دینے کے مواقع فراہم ہوتے ہیں۔ دریں اثناء ہندوستان اور بنگلہ دیش کی کمپنیوں نے آج یہاں 9 بلین امریکی ڈالر مالیت کے معاہدوں پر دستخط کئے جن کا مقصد برقی اور تیل اور گیس جیسے شعبوں میں شراکت داری میں گہرائی لانا ہے۔ مختلف یادداشتوں میں جن پر دورہ کنندہ وزیراعظم کی موجودگی میں دستخط کئے گئے، بنگلہ دیش ۔ انڈیا فرینڈشپ پاور کمپنی اور ایگزم بینک آف انڈیا کے درمیان معاہدہ شامل ہے جو بنگلہ دیش کے رامپال میں 1.6 بلین ڈالر کی لاگت سے 1,320 میگاواٹ والے مائتری پاور پراجکٹ کی تعمیر کے لئے قرض پر مبنی فینانس کی فراہمی سے متعلق ہے۔ ریلائنس پاور اور وزارت برقی، توانائی و معدنی وسائل کے درمیان دستخط کئے گئے معہدہ میں 3 ہزار میگاواٹ کا پاور پراجکٹ بمقام میگھنا گھاٹ شامل ہیں۔ اِس موقع پر اڈانی پاور (جھارکھنڈ) اور بنگلہ دیش پاور ڈیولپمنٹ بورڈ کے درمیان معاہدے پر دستخط بھی ہوئی جو 2 بلین ڈالر کی سرمایہ کاری سے متعلق ہے۔ علاوہ ازیں دستخط پائے معاہدوں میں پٹرو نیٹ ایل این جی، انڈیا اینڈ بنگلہ دیش آئیل ، گیس اینڈ منیرل کارپوریشن سے متعلق معاہدے بھی شامل ہیں۔ این ٹی پی سی ودیوت ویاپار نگم اور بنگلہ دیشی برقی بورڈ کے درمیان بھی 3.15 بلین ڈالر کی سرمایہ کاری کا معاہدہ ہوا۔ اِن معاہدوں پر دستخط کی تقریب کا اہتمام سی آئی آئی کی جانب سے کیا گیا۔

TOPPOPULARRECENT