Thursday , October 19 2017
Home / Top Stories / وزیراعظم پر آر بی آئی کی کارکردگی میں مداخلت کا الزام

وزیراعظم پر آر بی آئی کی کارکردگی میں مداخلت کا الزام

’’مودی کو کھادی سے دلچسپی نہیں ، 15 لاکھ کا سوٹ اور چرخہ ساتھ نہیں چل سکتے ‘‘: راہول گاندھی
رِشی کیش۔ 16 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس کے نائب صدر راہول گاندھی نے وزیراعظم نریندر مودی پر آر بی آئی جیسے خوداختیار اداروں کی کارکردگی میں مداخلت کا الزام عائد کرتے ہوئے آج کہا کہ ملک کے اس کلیدی بینک کے گورنر کو نوٹوں کی منسوخی کے فیصلہ سے صرف ایک دن قبل مطلع کیا گیا۔ راہول گاندھی نے اُتراکھنڈ میں ایک انتخابی جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’’آر بی آئی ایک ایسے خوداختیار ادارہ کے طور پر قائم کیا گیا تھا جو کسی سیاسی دباؤ سے پاک ہوکر کام کرسکتا ہے، لیکن آر بی آئی کے گورنر (ارجیت پٹیل) کو نوٹ بندی سے صرف ایک دن قبل مکتوب روانہ کیا گیا جس میں کہا گیا تھا کہ مودی جی نے 500 اور 1000 روپئے کے نوٹوں کے چلن سے دستبرداری اختیار کرنے کا فیصلہ کرلیا ہے‘‘۔ وزیراعظم پر حد سے زیادہ آمرانہ انداز میں کام کرنے کا ا لزام عائد کرتے ہوئے راہول گاندھی نے کہا کہ مودی ہر چیز پر اپنی تصویر مسلط کرنے پر اُتر آئے ہیں۔ کھادی و دیہی مصنوعات کمیشن ڈائری اور کیلنڈر پر حالیہ پیدا شدہ تنازعہ کا ایک مثال کے طور پر حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس کیلنڈر اور ڈائری سے مہاتما گاندھی کا چہرہ ہٹاکر مودی کا چہرہ لگا دیا گیا۔ وہ دن دُور نہیں ہے جب رام لیلا کرنے والے فنکار بھی لارڈ رام کے بجائے مودی کا ’’ماسک‘‘ لگائیں گے۔ راہول گاندھی نے کہا کہ ’’مودی جی صرف ایک شخص کی حکمرانی چاہتے ہیں۔ وہ چاہتے ہیں کہ ان کی آواز تلے دیگر تمام آوازوں کو دَبا دیا جائے‘‘۔ کانگریس کے لیڈر نے کہا کہ کھادی کے لئے مودی کی دلچسپی محض دکھاوا ہے کیونکہ 15 لاکھ روپئے کا سوٹ اور مہاتما گاندھی کا چرخہ ایک ساتھ نہیں چل سکتے۔ راہول گاندھی نے کہا کہ چرخہ دراصل گھریلو صنعتوں اور دستکاری کے فروغ کی علامت ہے جبکہ وزیراعظم نریندر مودی کو فی الواقعی اگر کھادی سے دلچسپی ہوتی تو وہ محض 50 منتخب صنعت کاروں کیلئے شب و روز کام نہیں کیا کرتے تھے۔

TOPPOPULARRECENT