Friday , October 20 2017
Home / جرائم و حادثات / وزیرجنگلات جوگو رمنا کے بیٹے کے خلاف قتل کا مقدمہ درج

وزیرجنگلات جوگو رمنا کے بیٹے کے خلاف قتل کا مقدمہ درج

5 جنوری سے لاپتہ شخص کی نعش دستیاب۔ عوام کے شدید احتجاج پر پولیس کی کارروائی
حیدرآباد۔ 8 جنوری (سیاست نیوز) ریاستی وزیر برائے جنگلات جوگو رامنا کے بیٹے جوگو پرمیندر کے خلاف عادل آباد پولیس نے قتل کا مقدمہ درج کرلیا ہے۔ پولیس کی جانب سے اس کیس کی تحقیقات کے بعد کارروائی کے اعلان سے عدم مطمئن مقامی عوام نے راجیو گاندھی انسٹیٹیوٹ آف میڈیکل سائنسیس پر متوفی کی نعش کے ساتھ دھرنا منظم کیا اور وزیر کے فرزند کی گرفتاری کا مطالبہ کیا۔ تفصیلات کے بموجب لکشمی پور کا متوطن 35 سالہ تروپتی ریڈی پراسرار طور پر 5 جنوری کو لاپتہ ہوگیا تھا جسکے بعد جئے ناتھ پولیس میں گمشدگی کا مقدمہ درج کیا گیا تھا۔ تروپتی کی نعش کل کھیت سے دستیاب ہوئی تھی جسکے بعد مقامی عوام برہم ہوگئے اور وزیر کے فرزند پر قتل کا الزام عائد کرکے پولیس میں شکایت درج کرائی۔ بتایا جاتا ہے کہ گزشتہ ہفتہ جوگو پرمیندر اپنے حامیوں کے ساتھ لکشمی پور علاقہ میں ایک شخص کی آخری رسوم میں شرکت کی غرض سے پہونچا جہاں تروپتی اور اسکے ارکان خاندان نے علاقہ کو نظرانداز کرنے اور مقامی مسائل کی عدم یکسوئی پر برہمی کا اظہار کیا۔ وزیر کے بیٹے نے عادل آباد پولیس میں شکایت درج کرائی جس پر پولیس نے مقدمہ درج کیا تھا۔ تروپتی کے ارکان خاندان نے وزیر کے بیٹے کو دھمکانے کے کیس میں پولیس سے ضمانت حاصل کرلی جبکہ تروپتی ضمانت حاصل کرنے میں ناکام رہا۔ وہ 5 جنوری کو عادل آباد کی مقامی عدالت میں ایس سی، ایس ٹی کیس میں عدالت پہنچا تھا جہاں سے وہ پراسرار طور پر لاپتہ ہوگیا۔ تروپتی کی نعش کھیت سے دستیاب ہونے پر اسکے ارکان خاندان نے وزیر کے بیٹے پر الزام عائد کیا کہ اسے زہر دے کر قتل کردیا گیا۔ سینکڑوں عوام نے دھرنا منظم کیا جسکے بعد وہاں حالات کشیدہ ہوگئے۔ عادل آباد پولیس کو متعین کردیا گیا اور رات دیر گئے تک کشیدگی تھی۔ متوفی تروپتی کی نعش کو بعد پوسٹ مارٹم ورثا کے حوالے کردیا گیا اور فارنسک ماہرین کی رائے حاصل کی جارہی ہے تاکہ موت کا سبب معلوم کیا جاسکے۔ ڈی ایس پی عادل آباد کے لکشمی نارائنا نے بتایا کہ جئے ناتھ پولیس میں درج کئے گئے مقدمہ کی تفصیلی تحقیقات کی جارہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT