Friday , August 18 2017
Home / Top Stories / وزیر اعظم طلبا کے سوالات کا جواب دینا ضروری نہیں سمجھتے : راہول

وزیر اعظم طلبا کے سوالات کا جواب دینا ضروری نہیں سمجھتے : راہول

پارلیمنٹ میں روہت ویمولہ کا نام نہ لینے پر تنقید ۔ آسام میں کانگریس نائب صدر کا ریلی سے خطاب
ناگاؤں ( آسام ) 4 مارچ ( سیاست ڈاٹ کام ) کانگریس کے نائب صدر راہول گاندھی نے پارلیمنٹ میں تقریر کے دوران حیدرآباد یونیورسٹی کے متوفی طالب علم روہت ویمولہ اور جے این یو طلبا تنظیم کے صدر کنہیا کمار کا نام نہ لئے جانے پر تنقید کی ہے ۔ راہول گاندھی نے یہاں آسام میں پارٹی کی ایک ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پارلیمنٹ میں نریندر مودی نے روہت ویمولہ یا کنہیا کمار کیلئے ایک سکنڈ کا بھی وقت نہیں دیا ۔ وزیر اعظم شائد یہ سمجھتے ہیں کہ ہندوستان جو سوالات کر رہا ہے اس کے جواب دینا ان کیلئے ضروری نہیں ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے طلبا بھی وزیر اعظم سے سوال کر رہے ہیں لیکن چونکہ وہ ملک کے وزیر اعظم بن گئے ہیں اس لئے وہ سمجھتے ہیں کہ انہیں ان سوالات کے جواب دینا ضروری نہیں ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ طریقہ کار غلط ہے کیونکہ وزیر اعظم ‘ ملک نہیں ہیں اور ملک وزیر اعظم نہیں ہے ۔ راہول نے کہا کہ روہت کی والدہ کو اس سے بہت تکلیف ہوئی ہے ۔ وزیر اعظم اس پر ایک لفظ تک نہیں کہہ سکتے ۔ وہ یہ بھی نہیں کہہ سکتے کہ انہیں افسوس ہے کہ روہت نے خود کشی کی ہے ۔ راہول گاندھی نے کہا کہ حیدرآباد سنٹرل یونیورسٹی میں روہت ویمولہ کو خود کشی پر مجبور کردیا گیا کیونکہ دہلی میں ایک وزارت نے ان کی یونیورسٹی کو مکتوب روانہ کیا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ دہلی میں ایک وزارت سے حیدرآباد میں یونیورسٹی کو ایک مکتوب روانہ کیا گیا تھا اورے ہی غلط ہوا ۔ انہوں نے کہا کہ سارے ملک کا بوجھ ایک طالب علم کے کندھوں پر لاد دیا گیا تھا اور اس نے خود کشی کرلی ۔ یہ بہت افسوس کی بات ہے ۔ یہ واضح کرتے ہوئے کہ آر ایس ایس کی جانب سے اپنے نظریات کو طلبا پر مسلط کیا جا رہا ہے راہول گاندھی نے کہا کہ روہت ویمولہ مثال ہے کہ ملک میں کیا کچھ ہو رہا ہے ۔ ہمارے کالجس اور یونیورسٹیز میں ہمارے نوجوانوں کو خوف کا شکار کیا جا رہا ہے ۔ ایک نظریہ کو مسلط کرنے کی کوشش کی جار ہی ہے جو آر ایس ایس کا نظریہ ہے ۔

TOPPOPULARRECENT