Friday , April 28 2017
Home / شہر کی خبریں / وزیر اعظم مودی اور چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر سپنوں کے سوداگر

وزیر اعظم مودی اور چیف منسٹر تلنگانہ کے سی آر سپنوں کے سوداگر

ملک میں اصلی اور نقلی ہندوازم میں مقابلہ آرائی ، کانگریس قائد کپل سبل کی پریس کانفرنس
حیدرآباد ۔ 21 ۔ اپریل : ( سیاست نیوز) : کانگریس کے سینئیر قائد سابق مرکزی وزیر کپل سبل نے مودی اور کے سی آر کو سپنوں کے سوداگر قرار دیتے ہوئے کہا کہ ملک میں اصلی اور نقلی ہندوازم میں مقابلہ شروع ہوچکا ہے ۔ دیش نہیں بدل رہا ہے بی جے پی میں خوشحالی آرہی ہے ۔ آر ایس ایس کے نظریات سے اختلاف کرنے والوں کو ملک کا غدار قرار دیا جارہا ہے اور یونیورسٹیز کو جنگ کے میدان میں تبدیل کردیا جارہا ہے ۔ آج گاندھی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے یہ بات بتائی ۔اس موقع پر اے آئی سی سی جنرل سکریٹری ڈگ وجئے سنگھ سکریٹری آر سی کنٹیا صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی کیپٹن اتم کمار ریڈی ورکنگ پریسیڈنٹ ملو بٹی وکرامارک قائد اپوزیشن کے جانا ریڈی سابق مرکزی وزیرسروے ستیہ نارائنا بھی موجود تھے ۔ کپل سبل نے کہا کہ جملوں کے ہیرپھیر اور جھوٹ بولنے میں وزیر اعظم مودی اور چیف منسٹر کے سی آر کا کوئی ثانی نہیں ہے ۔ نہ صرف وہ جھوٹ بولتے ہیں بلکہ اس کی اچھی طرح مارکیٹنگ بھی کرتے ہیں ۔ بی جے پی مذہب کے نام پر اور ٹی آر ایس طبقہ کے نام پر عوام کو تقسیم کررہی ہیں ۔ اقتدار حاصل کرنے کے تقریبا تین سال بعد بھی مودی اور کے سی آر نے عوام سے جو وعدے کیے ہیں اس کو پورا نہیں کیا ہے ملک میں امیر اور غریب کے درمیان جو فرق ہے اس کو گھٹانے کے بجائے بڑھایا جارہا ہے ۔ اشیاء ضروریہ کی قیمتوں کو کنٹرول کرنے میں دونوں ہی حکومتیں ناکام ہوچکی ہیں ۔ دلخوش وعدے کرتے ہوئے عوام کو گمراہ کیا جارہا ہے ۔ سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد اوما بھارتی کو وزارت پر برقرار رہنے کا کوئی حق نہیں ہے ۔ بی جے پی ہندوازم کو فروغ دینے کے معاملے میں انسانیت کو فراموش کرچکی ہے ۔ آر ایس ایس کے نظریات سے اتفاق نہ کرنے والوں پر ملک کے غدار ہونے کا لیبل لگایا جارہا ہے ۔ اے بی وی پی کو ہتھیار بناکر یونیورسٹیز کے تعلیمی ماحول کو بگاڑا جارہا ہے ۔ یونیورسٹیز جنگ کے میدان میں تبدیل ہوچکے ہیں ۔ ہندوتوا طاقتیں ہندوازم کے اصلی معنی و مفہوم سے واقف نہیں ہے ۔ ہندوازم سچائی پر چلنے اور تشدد سے دور رہنے کی تلقین کرتا ہے ۔ جس کی زندہ مثال گاندھی جی ہے ۔ وزیراعظم نریندر مودی کا ہر دوسرا بیان فساد کو ہوا دیتا ہے ۔ ملک میں اصلی اور نقلی ہندوازم کے درمیان جنگ شروع ہوچکی ہے ۔ قدرت پر یقین نہ رکھنے والے ویرساورکرکے نظریات پر عمل کرنے والے نقلی ہندوازم کے حامی ہیں ۔ جب کہ گاندھی کے نظریات پر یقین رکھنے والے اصلی ہندوازم کے حامی ہیں جو بھائی چارہ ، انسانیت خلوص و محبت کی پیروی کرتے ہیں ۔ افسوس کی بات ہے ہندوتوا طاقتیں ملک کے عوام کیا کھائے اور کیا نہیں کھائے اس کا فیصلہ کررہے ہیں ۔ کپل سبل نے تلنگانہ کو اصلی اور نقلی ہندوازم کے مقابلے کا مرکز بنانے پر زور دیتے ہوئے کہا کہ کانگریس پارٹی فرقہ پرستی کے خلاف مضبوط چٹان بن کر کھڑے رہے گی ۔ حالیہ پانچ ریاستوں کے اسمبلی انتخابات میں 2 ریاستوں میں کانگریس پارٹی سب سے بڑی جماعت بن کر ابھرنے کے باوجود حکومت تشکیل دینے سے محروم رہنے کے سوال کا جواب دیتے ہوئے کپل سبل نے کہا کہ یہ سب نوٹ بندی کا کمال ہے ۔ نوٹ بندی سے بی جے پی نے خوب کمایا ہے اور اس کو انتخابات میں لٹایا ہے ۔ کشمیر کی تازہ صورتحال پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے سابق مرکزی وزیر نے کہا کہ پی ڈی پی کو دہشت گردوں کی حامی قرار دینے والی بی جے پی نے انتخابات کے بعد پی ڈی پی سے اتحاد کرتے ہوئے حکومت تشکیل دی ہے ۔ حال ہی منعقدہ لوک سبھا کے ضمنی چناؤ میں صرف 7 فیصد رائے دہندوں نے حق رائے دہی سے استفادہ کیا ہے ۔ جو اس بات کا اشارہ ہے کہ عوام کو بی جے پی اور پی ڈی پی کی اتحادی حکومت پر بھروسہ نہیں ہے ۔ چیف منسٹر تلنگانہ کی جانب سے 12 فیصد مسلم تحفظات ، ڈبل بیڈ روم مکانات ، فیس ری ایمبرسمنٹ ، دلتوں میں تین ایکڑ اراضی کی تقسیم کے علاوہ دوسرے معاملت میں دھوکہ دینے کا الزام عائد کیا ۔ ریاست میں تین سال کے دوران 3 ہزار سے زائد کسانوں کی اموات پر تشویش کا اظہا کیا ۔۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT