Wednesday , October 18 2017
Home / دنیا / وسطی ایشیاء پر داعش کے قبضہ کا اندیشہ

وسطی ایشیاء پر داعش کے قبضہ کا اندیشہ

روسی سرحدوں کے قریب طالبان جنگجوؤں سرگرم، روسی انٹلیجنس کا انتباہ
ماسکو ۔ 28 ۔ اکتوبر (سیاست ڈاٹ کام) روسی انٹلیجنس نے طالبان یا اسلامک اسٹیٹ (داعش)  جنگجوؤں کی جانب سے وسطی ایشیا پر قبضہ کے بڑھتے ہوئے اندیشوں کے خلاف آج خبردار کیا ہے ۔ ایف ایس بی کے ڈائرکٹر الیگزینڈر بورٹیلیکوف نے روسی خبر رساں ایجنسیوں کی طرف سے جاری کردہ اپنے تبصروں میں کہا ہے کہ طالبان جنگجو جن میں چند نے داعش سے وفاداری کا عہد بھی کیا ہے۔ افغانستان کی شمالی سرحد پر جمع ہورہے ہیں جس سے وسطی ایشیا پر ان کے قبضے کے خطرات میں ا ضافہ ہورہا ہے ۔ سابق سویت یونین کی جمہوریتوں ترکمانستان ، ازبکستان اور تاجکستان سے افغانستان کی سرحدیں ملتی ہیں اور یہ روس میں منشیات کی اسمگلنگ کے اہم راستوں میں تبدیل ہوچکے ہیں جو روس کیلئے باعث تشویش بھی ہے ۔

داعش میں شمولیت کی کوشش ، روسی طالبہ کو سزا
اس دوران ماسکو میں ضلعی عدالت نے ایک 19 سالہ طالبہ واروراکارولوا کو گرفتار کرتے ہوئے قید کی سزا سنائی ہے۔ باوقار ماسکو اسٹیٹ یونیورسٹی کی یہ طالبہ چند ہفتہ قبل لاپتہ ہوگئی تھی جس کو بعد ازاں ترک سرحد پر حراست میں لیا گیا تھا۔ کارولوا مشرف بہ اسلام ہوچکی تھی اور داعش میں شمولیت کیلئے شام پہنچنا چاہتی تھی ۔ روسی ٹیلی ویژن نے کہا کہ کارولوا نے اپنا نام الیگزینڈرا ایوانوا رکھ لیا تھا جو اب دہشت گردی کے منصوبوں میں سازش کے شبہ پر ختم ڈسمبر تک سلاخوں کے پیچھے رہے گی۔

TOPPOPULARRECENT