Tuesday , September 26 2017
Home / شہر کی خبریں / وعدوں کی عدم تکمیل پر حکومت کے خلاف احتجاج کی دھمکی

وعدوں کی عدم تکمیل پر حکومت کے خلاف احتجاج کی دھمکی

تفصیلی احتجاجی پروگرام کو قطعیت ۔ جے اے سی اجلاس کے بعد پروفیسر کودانڈا رام کا بیان
حیدرآباد 25 ڈسمبر ( آئی این این ) تلنگانہ پولیٹیکل جوائنٹ ایکشن کمیٹی کے صدر نشین پروفیسر کودانڈا رام نے آج کہا کہ اگر ریاستی حکومت اپنی عوام مخالف پالیسیوں کو برقرار رکھتی ہے تو جے اے سی کی جانب سے احتجاج شروع کیا جائیگا ۔ جے اے سی کے اجلاس کے بعد میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے پروفیسر کودانڈا رام نے کہا کہ تلنگانہ جے اے سی نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ آئندہ مہینوں میں مختلف عوامی مسائل پر کئی احتجاج منظم کریگی ۔ پروفیسر نے کہا کہ ایک دھرنا 29 ڈسمبر کو حیدرآباد میں منعقد کیا جائیگا ۔ یہ دھرنا ریاستی حکومت کی جانب سے کسانوںکی اراضیات کی جبری وصولی کے خلاف کیا جائیگا ۔ انہوں نے کہا کہ جے اے سی کی جانب سے مختلف پروگرامس منعقد کئے جائیں گے ۔ یہ پروگرامس تعلیم ‘ملازمتوں وغیرہ کے مسائل پر ہونگے جو ماہ فبروری میں منعقد ہونگے ۔ انہوں نے کہا کہ جے اے سی کی جانب سے ماہ مارچ کے دوران ریاست کے مختلف مقامات پر مشن کاکتیہ اور مشن بھاگیرتا کے کاموں کا جائزہ لیا جائیگا ۔ اسی طرح جے اے سی کی جانب سے ذات پر مبنی پیشوں اور کاٹیج و اسمال اسکیل انڈسٹریز کے مسائل پر بھی احتجاج کیا جائیگا ۔ ٹی آر ایس حکومت پر انتخابات کے دوران کئے گئے مختلف وعدوں کو پورا نہ کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے پروفیسر کودانڈا رام نے کہا کہ ریاستی حکومت کو چاہئے کہ وہ فوری طور پر کنٹراکٹ ملازمین کی خدمات کو باقاعدہ بنانے اقدامات کرے جیسا کہ اس نے وعدہ کیا تھا ۔ انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ سرکاری ملازمین کے پے رویژن کمیشن کے بقایہ جات کی بھی فوری اجرائی عمل میں لائے ۔ یہ واضح کرتے ہوئے کہ ریاست میں کسان برادری کو سخت ترین مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے جوائنٹ ایکشن کمیٹی نے مطالبہ کیا کہ حکومت بیک وقت کارروائی کرتے ہوئے زرعی قرضہ جات کو معاف کرنے کا اعلان کرے ۔ انہوں نے ریاستی حکومت سے اپنی زرعی پالیسی کا اعلان کرنے کا بھی مطالبہ کیا ۔ جوائنٹ ایکشن کمیٹی نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ پراجیکٹس کے نام پر آدی واسیوں کی اراضیات زبردستی حاصل نہ کی جائیں۔ انہوں نے مطالبہ کیا کہ انسداد انحراف قانون پر سختی سے عمل آوری کی جانی چاہئے اور جو لوگ اپنی پارٹیوں سے انحراف کرتے ہوئے دوسری جماعتوں میں شامل ہو رہے ہیں ان سے قانون کے مطابق نمٹا جانا چاہئے ۔ پروفیسر کودانڈا رام نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ اپنے خانگی یونیورسٹیز بل پر پیشرفت نہ کرے ۔ حکومت کو زونل سسٹم برخواست کرنے سے بھی گریز کرنے کی ضرورت ہے اور اس پر کسی قطعی فیصلے سے قبل ایک کمیٹی تشکیل دیتے ہوئے اس کا جائزہ لیا جانا اچہئے ۔ صدر نشین جے اے سی نے کہا کہ ریاست کے عوام کو تلنگانہ جے اے سی میں یقین ہے اور وہ اس کے ساتھ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اگر حکومت اپنے وعدوں کی تکمیل نہیں کرتی ہے تو وہ احتجاج کا آغاز کریگی ۔

TOPPOPULARRECENT