Friday , April 28 2017
Home / ہندوستان / وندے ماترم تنازعہ سے مجلس بلدیہ الہ آباد دہل گئی

وندے ماترم تنازعہ سے مجلس بلدیہ الہ آباد دہل گئی

سماج وادی پارٹی کارپوریٹرس کا نئے رجحان کیخلاف احتجاج، قومی گیت کیخلاف نہیں

الہ آباد۔7 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) وندے ماترم پر تنازعہ آج مجلس بلدیہ الہ آباد تک پھیل گیا۔ جہاں قومی گیت گانے کے لزوم پر کارروائی کے آغاز میں سماج وادی پارٹی کارپوریٹرس نے احتجاج کیا۔ یہ واقعہ بلدی کارپوریٹرس میرٹھ اور واراناسی میں اسی طرح اس مسئلہ پر ہنگامہ کھڑا کرنے کے واقعے کے بعد پیش آیا۔ بی جے پی رکن گری شنکر پربھاکر نے کل مجلس بلدیہ الہ آباد میں تجویز پیش کی تھی کہ کارروائی کے آغاز میں قومی گیت گایا جائے اور اختتام پر قومی ترانہ گایا جائے۔ تاہم سماج وادی کارپوریٹرس نے اتھر رضا اور سشیل یادو کی زیر قیادت اس کی پرشور مخالفت کی۔ بی جے پی ارکان نے الزام عائد کیا کہ احتجاجی کارپوریٹرس نے اس وقت کھڑے ہونے سے انکار کردیا تھا جبکہ قومی گیت گایا جارہا تھا۔ میئر ابھیلاشا گپتا نے پربھاکر کی تجویز کو منظوری دے دی۔ اس اقدام کی مخالفت کا دفاع کرتے ہوئے رضا نے الزام عائد کیا کہ وندے ماترم کو سیاسی رنگ دیا جارہا ہے اور بی جے پی کا ہمیشہ سے یہی طریقہ کار رہا ہے۔ سماج وادی پارٹی ارکان نے مخالفت کی اور کہا کہ ایک نیا ضابطہ ایک ایسے وقت منظور کیا جارہا ہے جبکہ ایوان کی میعاد کے اختتام کے لیے صرف چند ماہ باقی ہیں۔ ان کے احتجاج کے نتیجہ میں کارروائی چند گھنٹوں کے لیے معطل ہوگئی جب ایوان کا اجلاس دوبارہ شروع ہوا تو میئر ابھیلاشا گپتا نے پربھاکر کی تجویز کو منظوری دے دی۔ اس کے بعد قومی گیت وندے ماترم ارکان نے گایا۔ احتجاجی ارکان بطور احتجاج احاطہ سے واک آئوٹ کرگئے اور بعد میں اس دن کی کارروائی قومی ترانہ جنا گنا منا گانے پر اختتام پذیر ہوئی۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT