Saturday , October 21 2017
Home / ہندوستان / و زیٹنگ پروفیسر کی حیثیت سے سندیپ پانڈے کی برطرفی

و زیٹنگ پروفیسر کی حیثیت سے سندیپ پانڈے کی برطرفی

الہ آباد ہائیکورٹ میں آئی آئی ٹی بنارس کا حکم کالعدم
الہ آباد 23 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) الہ آباد ہائیکورٹ نے آئی آئی ٹی ۔ بنارس ہندو یونیورسٹی کے وزیٹنگ فیکلٹی ممبر کی حیثیت سے میگسیسے ایوارڈ یافتہ سندیپ پانڈے کے کنٹراکٹ کو یکلخت ختم کردینے کے حکم کو کالعدم قرار دیا ہے اور کہاکہ قوم دشمن سرگرمیوں جیسے الزامات پر یکطرفہ کارروائی فطری انصاف کے اصولوں کے مغائر ہے۔ جسٹس وی کے شکلا اور جسٹس مہیش چندرا ترپاٹھی پر مشتمل ڈیویژن بنچ نے کل پانڈے کی پیش کردہ ایک عرضی کو سماعت کے لئے قبول کرلیا ہے۔ جس میں انھوں نے ان کے کنٹراکٹ کو ختم کردینے سے متعلق 6 جنوری کو جاری ایک حکم کو چیلنج کیا ہے جس کے تحت ان کا ڈپارٹمنٹ آف کمیکل ٹیکنالوجی میں وزیٹنگ پروفیسر کی حیثیت سے تقرر کیا گیا اور ان کی میعاد جاریہ سال 30 جولائی کو ختم ہونے والی تھی۔ اس حکم پر اعتراض کرتے ہوئے سندیپ پانڈے جوکہ گاندھیائی کارکن بھی ہیں بتایا کہ بورڈ آف گورنر آئی آئی ٹی بنارس ہندو یونیورسٹی کے بورڈ آف گورنرس کے اجلاس ان کا کنٹراکٹ ختم کردینے کا فیصلہ کیا گیا اور انھیں سائبر جرائم اور قوم دشمن سرگرمیوں میں ملوث ہونے کا قصوروار قرار دیا گیا۔ بورڈ آف گورنرس نے پولٹیکل سائنس کے ایک طالب علم کے ایک مکتوب پر یہ کارروائی کی ہے جس میں یہ الزام عائد کیا گیا ہے کہ مسٹر پانڈے نہ صرف سیاسی سرگرمیوں میں شامل رہتے ہیں بلکہ نکسلائٹس کے پکے حامی بھی ہیں جس پر عدالت نے کہاکہ درخواست گذار کے خلاف الزامات سنگین نوعیت کے ہیں اور ان سے وضاحت طلبی کے بغیر یکطرفہ فیصلہ کو عدالت قبول نہیں کرسکتی۔

TOPPOPULARRECENT