Saturday , August 19 2017
Home / کھیل کی خبریں / ٹاٹا اسٹیل کولکتہ دوڑ ‘ سدھا سنگھ اور ایلام سنگھ نے خطاب جیتے

ٹاٹا اسٹیل کولکتہ دوڑ ‘ سدھا سنگھ اور ایلام سنگھ نے خطاب جیتے

وومنس زمرہ میں سدھا نے میٹ ریکارڈ کو بہتر بنایا ۔ آئندہ ماہ ممبئی مراتھن کیلئے اتھیلیٹس کی تیاریوں کو تقویت
کولکتہ 20 ڈسمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) ٹاٹا اسٹیل کولکتہ 25K روڈ ریس کا آج یہاں انعقاد عمل میں آیا جس میںخواتین کے زمرہ میں سدھا سنگھ نے ٹورنمنٹ ریکارڈ کو مزید چھ سکنڈز سے بہتر بناتے ہوئے ایلیٹ وومنس خطاب جیت لیا جبکہ مردوں کے زمرہ میں فوجی ایلام سنگھ نے خطاب جیت ۔ اس موقع پر ان کی مقامی انفینٹری ریجمنٹ کا عملہ بھی موجود تھا ۔ 2010 ایشین گیمس میں گولڈ میڈل جیتنے والی اور 3000 میٹر کی دوڑ میں سابق نیشنل ریکارڈ ہولڈر سدھا سنگھ للیتا ببر اور او پی جئیشا کے ساتھ نصف دوڑ تک مقابلہ میں برابری رکھی تھی تاہم آخری دو کیلومیٹر کے فاصلے میں انہوں نے اپنی دوڑ میں تیزی پیدا کی اور یہ دوڑ انہوں نے جملہ ایک گھنٹہ 27 منٹ اور 31 سکنڈ میں پوری کرلی ۔ یہ وقت سابقہ میٹ ریکارڈ سے چھ سکنڈ کم ہے ۔ اس سے قبل کویتا راوت نے گذشتہ سال کے ٹاٹا اسٹیل کولکتہ 25K دوڑ ایک گھنٹہ 33 منٹ اور 39 سکنڈ میں پوری کی تھی ۔ سدھا سنگھ کو اس مقابلہ میں کامیابی پر تین لاکھ روپئے کا انعام حاصل ہوا جبکہ میٹ ریکارڈ توڑنے پر انہیں پچاس ہزار روپئے کا اضافی بونس بھی حاصل ہوگا ۔ اس دوڑ کیلئے جملہ 22.80 لاکھ روپئے کی انعامی رقم رکھی گئی تھی ۔ اس سال کویتا راوت نے اس دوڑ میں حصہ نہیں لیا ۔

گذشتہ سال سدھا کو کویتا کے بعد دوسرا مقام حاصل ہوا تھا اور اس بار انہوں نے اپنے سابقہ تجربہ کو بروئے کار لاتے ہوئے ریکارڈ کامیابی حاصل کی ہے ۔ مینس ایلیٹ زمرہ میں ایلام سنگھ نے ایک گھنٹہ 20 منٹ اور 14 سکنڈ میں یہ دوڑ مکمل کرتے ہوئے خطاب جیت لیا جبکہ سرینوس بوگاتھا نے ایک گھنٹہ 20 منٹ اور 16 سکنڈ میں دوڑ مکمل کرتے ہوئے دوسرا مقام حاصل کیا ۔ او سناٹن سنگھ کو ایک گھنٹہ 20 منٹ اور 23 سکنڈ کے ساتھ تیسرا مقام حاصل ہوا ۔ اس دوڑ کو کافی اہمیت بھی حاصل ہوگئی ہے کیونکہ آئندہ سال 17 جنوری کو اہمیت کی حامل ممبئی مراتھن کا انعقاد عمل میں آنے والا ہے اور اس میں تمام بڑے اتھیلیٹس حصہ لینے والے ہیں۔ ریلویز کیلئے مقابلہ کرنے والے تینوں ہی اتھیلیٹس نے اس دوڑ میں کارنامے انجام دئے اور اب ان سے ممبئی مراتھن میں بھی اچھے مظاہرہ کی توقع کی جا رہی ہے ۔ ان تمام کو بیلاروس کے درمیانی و طویل فاصلہ تک کے کوچ نکولائی سنیساریو نے اووٹی کے نیشنل کیمپ میںتربیت فراہم کی تھی ۔ سدھا سنگھ نے آج کی کامیابی سے قبل 3000 میٹر کی دوڑ میں سات سال تک مسلسل کامیابی حاصل کی تھی اور وہ للیتا سے سخت مقابلہ کے بعد کامیاب رہیں۔ سدھا نے تاہم معمولی فرق سے للیتا کے خلاف کامیابی حاصل کرلی ۔ للیتا کو اپنے ٹخنے میں تکلیف کا بھی سامنا تھا ۔ سدھا نے کامیابی کے بعد کہا کہ یہ ایک بہترین کامیابی ہے اور اس سے ان کے حوصلے ممبئی مراتھن کیلئے بلند ہوگئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT