Monday , August 21 2017
Home / Top Stories / ٹولی چوکی اور دیگر کئی بینکس کے روبرو عوام کا زبردست احتجاج

ٹولی چوکی اور دیگر کئی بینکس کے روبرو عوام کا زبردست احتجاج

جشن میلاد النبیؐ کے موقع پر عوام حصول رقم سے قاصر ، وزیراعظم کے خلاف نعرہ بازی ، ٹریفک نظام درہم برہم
حیدرآباد۔9۔ ڈسمبر (سیاست نیوز) بینکوں میں نقد رقم موجود نہ ہونے کے سبب عوامی برہمی میں آج شدید اضافہ دیکھا گیا اور شہر کے بعض علاقوں میں بینکوں کے باہر طویل قطاروں میں کھڑے عوام نے راستہ روکو احتجاج منظم کرتے ہوئے ’نریندر مودی ہائے ہائے‘ کے نعرے لگائے اور الزام عائد کیا کہ بینک عہدیدار عوام اور کھاتہ داروں کی مشکلات کو دور کرنے کے بجائے سرکردہ افراد کو بھاری رقومات مختلف طریقوں سے جاری کررہے ہیں جس کے سبب عوام کی تکالیف میں کوئی کمی واقع نہیں ہو پا رہی ہے۔ 8نومبر کی شب کرنسی کی تنسیخ کے اعلان کے بعد سے پریشان شہری جو کہ 10نومبر سے بینکوں کی قطار میں ہیں ان کی پریشانی دور ہوتی نظر نہیں آرہی ہے اور ان کی ان پریشانیوں کو دور کرنے کیلئے کوئی سرکردہ سیاسی قائد آگے نہیں آرہے ہیں لیکن ٹولی چوکی گیلاکسی تھیٹر کے قریب آج برہم کھاتہ داروں نے قطار سے نکل کر سڑک پر احتجاج شروع کردیا جس کے سبب اس مصروف ترین سڑک پر زائد از دو گھنٹے ٹریفک درہم برہم رہی۔ اسی طرح پرانے شہر کے بعض علاقوں میں بھی پولیس اور بینک عہدیداروں کو شدید عوامی برہمی کا سامنا کرنا پڑا۔ شہر میں موجود بینکوں کے روبرو طویل قطاروں میں کوئی کمی نہیں آرہی ہے اور بینک عہدیدار یہ کہہ رہے ہیں کہ انہیں نقد رقومات ملنے پر ہی وہ عوام کو حوالے کرسکتے ہیں لیکن کارکرد کرنسی واپس بینک نہیں پہنچنے کے سبب انہیں اس مشکل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے کیونکہ بینک کاری نظام میں کرنسی کی آمد و رفت صرف ریزرو بینک آف انڈیا سے ممکن نہیں ہوتی بلکہ تاجرین کی جانب سے اپنے کھاتوں میں جو رقومات جمع کروائی جاتی ہیں ان رقومات کی اجرائی عمل میں لائی جاتی ہے لیکن تاجرین اور عوام مختلف خدشات کے سبب اب بھی کارکرد کرنسی بینک میں جمع کروانے سے گریز کررہے ہیں جبکہ حکومت نے کارکرد کرنسی جمع کروانے والے کھاتہ داروں پر رقم منہاء کرنے کی کوئی حد نہیں رکھی ہے لیکن بینک عہدیداروں کا کہنا ہے کہ کارکرد کرنسی رکھنے والے تاجرین کا کہنا ہے کہ جب بینک میں نقدی ہے ہی نہیں تو ایسی صورت میں نقد کارکرد کرنسی جمع کرواتے ہوئے ضرورت کے موقع پر نکالا کیسے جائے ؟ ان خدشات کے سبب تاجرین کرنسی جمع کروانے سے گریز کر رہے ہیں۔دونوں شہروں کے مختلف بینکوں کے باہر آج طویل قطاریں دیکھی گئیں کیونکہ ہفتہ‘ اتوار اور پیر کو بینک تعطیل کے سبب لوگ آج جلد از جلد رقم منہا ء کرنے کے متعلق فکر مند تھے۔پرانے شہر کے مختلف علاقوں میں عوام کو بینک عملہ پر شدید برہمیظاہر کرتے دیکھا گیا کیونکہ ان کا کہنا تھا کہ انہیں آئندہ دو یوم کے دوران عید میلاد النبی ﷺ کی تیاریاں کرنی ہے لیکن ان کے پاس نقد رقومات نہ ہونے کے سبب وہ مالی  مشکلات کا شکار بنے ہوئے ہیں۔دونوں شہروں کے کئی بینکوں میں دوپہر لنچ کے وقفہ سے قبل ہی بینک کے باب الداخلہ پر ’نو کیش ‘ کے پوسٹر چسپاں کردیئے گئے تھے جس کے سبب عوام میں برہمی پیدا ہوگئی تھی۔

TOPPOPULARRECENT