Thursday , September 21 2017
Home / کھیل کی خبریں / ٹینس میں بڑے پیمانے پر مبینہ میچ فکسنگ کا انکشاف

ٹینس میں بڑے پیمانے پر مبینہ میچ فکسنگ کا انکشاف

ملبورن۔19 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) ٹینس میں میچ فکسنگ کے مبینہ انکشافات کے سائے تلے آسٹریلین اوپن کا آغاز ہوگیا جس میں شامل عالمی نمبر ایک نوواک جوکووچ نے اعتراف کیا ہیکہ انہیں کیریئر کے شروع میں فکسنگ کی پیشکش ہوئی تھی۔ اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق بی بی سی اور بز فیڈ نے دعویٰ کیا ہے کہ گزشتہ دہے میں 16 گرانڈ سلام چمپئنز سمیت سرفہرست 50 کھلاڑیوں نے مبینہ طور پر جواریوں کے لئے میچ فکسڈ کئے جن میں 8 کھلاڑی آسٹریلین اوپن میں شرکت کررہے ہیں جبکہ 16 کھلاڑیوں کے اس گروہ میں سے کسی بھی کھلاڑی کو سزا نہیں ہوئی۔ بزفیڈ کے بموجب اہم مقابلوں کے دوران ہوٹلوں میں کھلاڑیوں کے کمروں میں جا کر میچ فکسنگ کے لئے 50 ہزار ڈالرس یا اس سے زیادہ رقم کی پیش کش کی جاتی تھی۔ ٹینس میں میچ فکسنگ کی یہ سنسنی خیز رپورٹ عالمی طور پر کھیلوں میں بدعنوانی پر نظر رکھنے والی تنظیم’انٹیگرٹی یونٹ‘ کے پاس درج کروائی گئی ہے۔ رپورٹ کے مطابق شکایات کے باوجود ان تمام کھلاڑیوں کو عالمی مقابلوں میں شرکت کرنے کی اجازت دی جاتی رہی۔ دوسری جانب اسوسی ایشن آف ٹینس پروفیشنلز (اے ٹی پی) کے چیف کرس کرموڈ نے کہا ہے کہ ٹینس کی انٹیگریٹی یونٹ(ٹی آئی یو) اور کھیل سے متعلق حکام کسی بھی ایسے خیال کو رد کرتے ہیں کہ میچ فکسنگ کے ثبوت دبائے گئے یا ان کی مفصل تحقیقات نہیں کی گئیں۔ مذکورہ  رپورٹس تقریباً 10 سال پرانے مقابلوں کے حوالے سے ہیں، ہم کسی بھی نئی معلومات پر تحقیقات کریں گے جو ہم ہمیشہ کرتے ہیں۔ 2007 کی تحقیقات کا حصہ رہنے والے مارک فلپس نے کہا ہے کہ  ان تحقیقات میں یہ بات سامنے آئی تھی کہ ایک مخصوص گروپ مسلسل سٹے بازی کی مبینہ سرگرمیوں میں ملوث رہا ہے۔ دس کے قریب کھلاڑی ایسے تھے جن کے بارے میں ہمیں یقین تھا کہ یہ ان حرکات میں ملوث ہیں اور مسائل کی جڑ ہیں۔. مارک فلپس نے یہ بھی کہا کہ ثبوت بہت ٹھوس تھے اور اس وقت اس برائی کو ابتدا میں ہی جڑ سے ختم کرنے کا موقع تھا۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ جوئے اور جواریوں پر نظر رکھنے والی تنظیم یورپین اسپورٹس سکیورٹی اسوسی ایشن نے انٹیگریٹی یونٹ کو گزشتہ سال 50 مشتبہ کھلاڑیوں کے نام فراہم کئے تھے۔

TOPPOPULARRECENT