Sunday , September 24 2017
Home / شہر کی خبریں / ٹی آر ایس حکومت کا کانگریس قائدین کے خلاف انتقامی رویہ

ٹی آر ایس حکومت کا کانگریس قائدین کے خلاف انتقامی رویہ

ورنگل ضلع کانگریس صدر پر قتل کا مقدمہ درج کرنے کی مذمت۔ ضلعی صدور کا مشترکہ رد عمل
حیدرآباد ۔ 17 ۔ جولائی : ( سیاست نیوز ) : تلنگانہ کانگریس کی نمائندگی کرنے والے مختلف اضلاع کے کانگریس صدور نے مخالف عوام دشمن پالیسیوں کے خلاف عوام میں شعور بیدار کرنے والے کانگریس قائدین کے خلاف انتقامی کارروائی کرنے کا ٹی آر ایس حکومت پر الزام عائد کیا ۔ ورنگل میں ٹی آر ایس کارپوریٹر کے قتل میں ضلع ورنگل کانگریس صدر این راجندر ریڈی کو ملوث کردینے کی سخت مذمت کی ۔ آج گاندھی بھون میں مختلف اضلاع کی نمائندگی کرنے والے کانگریس صدور کا اجلاس منعد ہوا جس میں مرتینجم ( کریم نگر ) ، کے ملیشم (رنگاریڈی ) ، عبید اللہ کوتوال ( محبوب نگر ) ، جادو ( عادل آباد ) ، سرینواس ( ورنگل سٹی ) کے علاوہ نائب صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی کمار راؤ ، جنرل سکریٹریز سید عظمت اللہ حسینی ، ایچ وینو گوپال ، بلوکشن ، پریم لعل وغیرہ نے شرکت کی ۔ جب کہ صدر ضلع کانگریس کمیٹی نلگنڈہ بھکشمیا گوڑ نے اجلاس کی صدارت کی ۔ بعد ازاں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کانگریس کے قائدین نے بتایا کہ حکمران ٹی آر ایس ریاست کو اپوزیشن سے پاک بنانے کی منظم سازش کررہی ہے ۔ پہلے دوسری جماعتوں کے ٹکٹ پر کامیابی حاصل کرنے والے ارکان اسمبلی ارکان پارلیمنٹ کو لالچ دے کر ٹی آر ایس میں شامل کرلیا گیا ۔ ٹی ار ایس کے لالچ سے متاثر نہ ہونے والے قائدین کو ڈرایا دھمکایا جارہا ہے اور قتل جیسے جھوٹے مقدمات میں انہیں ملوث کرتے ہوئے حق کی آواز کو دبانے کی کوشش کی جارہی ہے ۔ جس کی کانگریس پارٹی سخت مذمت کرتی ہے ۔ ورنگل میں ٹی آر ایس کارپوریٹر کا قتل کرنے والے ملزمین نے خود کو پولیس کے حوالے کردیا ہے ۔ باوجود اس کے ایک منظم سازش کے تحت ورنگل ضلع کانگریس صدر راجندر ریڈی کو قتل مقدمہ میں ماخوذ کردیا گیا ہے ۔ جس کی کانگریس مذمت کرتی ہے ۔ پولیس کے ایف آر آئی میں این راجندر ریڈی کے علاوہ مزید دو کانگریس قائدین کے ناموں کو شامل کردیا گیا ہے ۔ این راجندر ریڈی کا جرائم کی سرگرمیوں سے کوئی تعلق نہیں ہے اور نہ ہی مقتول سے ان کی کوئی دشمنی تھی ۔ باوجود اس کے سیاسی انتقام کے طور پر انہیں پھنسایا جارہا ہے کیوں کہ وہ حکومت کی عوام دشمن پالیسیوں کے خلاف آواز اٹھا رہے ہیں انہیں سیاسی طور پر نقصان پہونچانے قتل کے مقدمے میں ملوث کردیا گیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT