Monday , May 29 2017
Home / Top Stories / پارلیمنٹ میں نوٹ بندی کے تنازعہ پر تعطل برقرار

پارلیمنٹ میں نوٹ بندی کے تنازعہ پر تعطل برقرار

اپوزیشن کے احتجاج پر حکمران جماعت کے جوابی نعرے
نئی دہلی۔9 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) نوٹوں کی منسوخی کے مسئلہ پر گزشتہ دو ہفتے سے لوک سبھا کے کام کاج میں پڑ رہے خلل کے معاملے پر صدر جمہوریہ پرنب مکھرجی اور بی جے پی کے سینئر لیڈر لال کرشن اڈوانی کے بیان پر آج حکمراں جماعت اور اپوزیشن نے ایک دوسرے کو نشانہ بنایا، جس کی وجہ سے بھاری شورشرابے کے درمیان ایوان کی کارروائی پہلے ساڑھے گیارہ بجے تک کے لئے اور پھر 12 بجے تک کے لئے ملتوی کر دی گئی۔صبح گیارہ بجے اسپیکر سمترا مہاجن نے ایوان کی کارروائی جیسے ہی شروع کی، حکمراں جماعت کے ارکان نے صدر جمہوریہ پرنب مکھرجی کے کل کے اس بیان کا حوالہ دیکر اپوزیشن پر حملہ بول دیا جس میں صدر نے پارلیمنٹ کے کام کاج میں مسلسل رکاوٹ پر ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے اسے انتہائی افسوس ناک قرار دیا تھا۔ دوسری طرف اپوزیشن کے ارکان نے بی جے پی کے سینئر لیڈر لال کرشن اڈوانی کے بیان کا حوالہ دے کر حکمراں جماعت کو نشانہ بناتے ہوئے نعرے بازی کی۔ اپوزیشن ارکان کا کہنا تھا کہ حکمراں جماعت کے ارکان کو مسٹر اڈوانی کے اس بیان پر غور کرنا چاہئے جس میں انہوں نے کہا تھا کہ ایوان کی کارروائی بہتر طریقے سے چلانے میں حکومت کی بھی کوئی دلچسپی دکھائی نہیں دے رہی ہے ۔محترمہ مہاجن نے ارکان سے پرسکون رہنے کی اپیل کی اور وقفہ سوالات میں رکاوٹ نہ ڈالنے کی درخواست کی لیکن اس کے باوجود ایوان میں شور شرابہ ہوتا رہا۔ جس کی وجہ سے اسپیکر نے کاروائی ساڑھے گیارہ بجے تک کے لئے ملتوی کر دی۔ دوبارہ کارروائی شروع ہونے پر بھی دونوں جماعتوں کی جانب سے ہنگامہ جاری رہنے پر اسپیکر نے کارروائی 12 بجے تک کے لئے ملتوی کر دی۔ دو مرتبہ کے التوا کے بعد ایوان کی کارروائی 12 بجے جیسے ہی شروع ہوئی اپوزیشن کے ارکان پر شور انداز میں ایوان کے وسط میں آ گئے ۔ شور شرابہ کے درمیان ہی اسپیکر نے ایوان کے رکن بھگوت مان کے پارلیمنٹ ہاؤس کے احاطے کے ویڈیو سوشل میڈیا پر جاری کرنے سے پیدا صورتحال پر قائم کمیٹی کی رپورٹ سمیت تمام ضروری کاغذات ایوان میں پیش کرنے کی اجازت دی ۔زبردست ہنگامے کے درمیان مسز مہاجن نے وقفہ صفرکی کارروائی شروع کرنے کی اعلان کیا لیکن اسی درمیان حکمراں بینچ کے بھی کئی ارکان اپنی نشستوں سے اٹھ گئے اور اپوزیشن کی طرف رُخ کر کے زور زور سے بولنے لگے ۔ اپوزیشن ارکان نے بھی جواباً ”بھانے باجي بند کرو، بحث سے بھاگنا بند کرو، آپ کی غلطی پکڑی گئی”’جیسے نعرے لگانے شروع کر دیئے ۔حکمراں بینچ اور اپوزیشن کے ارکان کے شور شرابہ کی وجہ ایوان میں کچھ نہیں سنائی دے رہا تھا جس کی وجہ سے مسز مہاجن نے ایوان کی کارروائی دن بھر کیلئے ملتوی کر دی. پیر اور منگل کو تعطیل ہے اس لئے ایوان کی کارروائی اب چہارشنبہ کی صبح 11 بجے شروع ہوگی۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT