Monday , August 21 2017
Home / اضلاع کی خبریں / پانی کے بے جا استعمال سے گریز کی خواہش

پانی کے بے جا استعمال سے گریز کی خواہش

نظام آباد:22؍ مارچ(سیاست ڈسٹرکٹ نیوز)ضلع کلکٹر ڈاکٹر یوگیتا رانا نے بتایا کہ اپریل اور ماہ مئی میں دھوپ کی شدت میں اضافہ کے امکانات ہیں۔ لہذا کوئی شخص پانی کا بیجا استعمال نہ کرے آبی سہولتوں کی فراہمی کیلئے فنڈس کی کوئی قلت نہیں ہے لیکن پانی کے بیجا استعمال سے گریز کریں۔ آبی سہولتوں کی فراہمی کیلئے ریاستی حکومت نے سی آر ایف اسکیم کے تحت 9.63 کروڑ روپئے منظور کی ہے۔ ان فنڈس سے 4.96 کروڑ روپئے کے 741 کاموں کو منظور کیا جارہا ہے۔ 535 بورویل کی فلیشنگ اور ڈیفینگ کی جارہی ہے۔ 195 زرعی باولیاں کرایہ پر لیتے ہوئے محفوظ پانی کی سربراہی کیلئے 70 کلو میٹر عارضی پائپ لائن کی تنصیب عمل میں لارہی ہے۔ دیہاتوں کو ٹرانسپوٹیشن کے ذریعہ پینے کے پانی کی سربراہی،گذشتہ سال مارچ 21 تک 16 دیہاتوں کو ٹرانسپورٹیشن کے ذریعہ پانی سربراہ کیا گیا تھا۔ منڈل سطح پر ایم پی ڈی اوز، تحصیلدار، آرڈبلیو ایس کے اے ایس، چینج ایجنٹس کی ٹیم بنیادی طور پر جائزہ لیتے ہوئے حالات کے مطابق جنگی خطوط پر پینے کا پانی پہنچانے کیلئے اقدامات کریں گے۔ پینے کے پانی کی فراہمی کے بارے میں موجودہ حالات سے واقفیت کیلئے منڈل پرجا پریشد کے صدور،ضلع پریشد کے اراکین پر مشتمل ’’واٹس گروپ ‘‘ضلع کے عہدیداروں سے مربوط کیا گیاہے۔منڈل سطح پر ویڈیو کانفرنس کے ذریعہ جائزہ لیا جائیگاٹول فری نمبر 18004256644 کا قیام عمل میں لایا گیا ہے اور 2 آرڈبلیو ایس ملازمین کا تقرر کیا گیا ہے۔ آنے والے دنوں میں آبی قلت پیدا ہونے کے امکانات ہیں۔ لہذا پینے کے پانی کا بیجا استعمال نہ کرے۔ ضرورت کے مطابق پانی کا استعمال کرنے کی خواہش کی۔ ہنگامی صورت میں 24 گھنٹے کے اندر فنڈس کی منظوری عمل میں لانے کی مقامی طور پر آبی سہولتوں کی فراہمی کیلئے منتخب نمائندوں کے اشتراک سے پینے کا پانی فراہم کرنے کی ہدایت دی۔

TOPPOPULARRECENT