Thursday , August 17 2017
Home / ہندوستان / پاور پراجکٹ اسکام میں مرکزی وزیر کا مشتبہ رول

پاور پراجکٹ اسکام میں مرکزی وزیر کا مشتبہ رول

کرن رجیجو کو برطرف کردینے کانگریس کا مطالبہ
نئی دہلی۔/13ڈسمبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) کانگریس نے آج مطالبہ کیا ہے کہ 450کروڑ کے ارونا چل پاور اسکام میں ملوث مرکزی وزیر کرن رجیجو کو برطرف کردیا جائے اور کہا کہ حکومت کی کارکردگی میں شفافیت لانے کیلئے وزیر اعظم نریندر مودی کے بلند بانگ دعوؤں کی قلعی کھل گئی ہے۔ یہ ادعا کرتے ہوئے کہ اس معاملہ میں کرن رجیجو کا رول شک کے دائرہ میں آتا ہے۔ کانگریس ترجمان رندیپ سرجیوالا نے ایک ویڈیو ٹیپ بھی جاری کی ہے جس میں رجیجو اور ان کے کزن جو کہ 800 میگا واٹ پاور پراجکٹ میں کنٹراکٹر ہیں ادائیگیوں کے بارے میں بات چیت کرتے ہوئے ریکارڈ کئے گئے ہیں۔ کانگریس ترجمان نے کہا کہ چونکہ کرن رجیجو شک کے دائرہ میں آگئے ہیں لہذا انہیں وزارتی عہدہ پر برقرار رہنے کا حق نہیں ہے۔ انہیں وزیر اعظم برطرف کردیں یا پھر آزادانہ تحقیقات مکمل ہونے تک عہدہ چھوڑدیں۔ سرجیوالا نے وزیر اعظم کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ شفافیت کے بلند بانگ دعوے کھوکھلے ثابت ہوئے ہیں کیونکہ متعدد اسکامس بشمول ویاپم، للت گیٹ اور وجئے مالیا پیش آچکے ہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ ہندوستانی عوام اب یہ انتظار میں ہیں کہ نریندر مودی ارونا چل پاور اسکام میں کیا کارروائی کریں گے جس میں 450 کروڑ کا گھپلا کیا گیا اور مرکزی وزیر نے کنٹراکٹر کو بلز کی اجرائی میں اعانت کرنے کا تیقن دیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT