Tuesday , October 24 2017
Home / کھیل کی خبریں / پاکستانی ٹیم مشاورت کے بغیر ہندوستان نہ جائے : نواز شریف

پاکستانی ٹیم مشاورت کے بغیر ہندوستان نہ جائے : نواز شریف

وفاقی وزیر داخلہ چودھری نثار نیشنل کرکٹ ٹیم کے دورۂ ہند کے سخت مخالف، پی سی بی چیرمین شہریار خان کا عدم اتفاق
اسلام آباد ، 17 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) پاکستانی کرکٹ ٹیم کے دورۂ ہندوستان سے متعلق معاملہ مزید طول پکڑتا جارہا ہے جیسا کہ وزیر اعظم نواز شریف نے پی سی بی کو مشاورت کے بغیر پاکستانی ٹیم کو سیریز کیلئے ہندوستان بھیجنے کا فیصلہ کرنے سے روک دیا ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق وزیراعظم نے پی سی بی کو ہدایت دی ہے کہ ہندوستان جانے کا فیصلہ واضح ہدایت سے قبل نہ کیا جائے۔ انہوں نے پاکستان کرکٹ بورڈ کو دورۂ ہندوستان سے متعلق پیشگی اطلاع سے قبل فیصلہ کرنے سے روک دیا ہے۔ اس سے قبل وفاقی وزیر داخلہ چودھری نثار علی خان نے کہا تھا کہ وہ پاکستانی ٹیم کے ہندوستان جا کر کھیلنے کی مخالفت کریں گے اور اس سلسلے میں وزیر اعظم سے بھی بات کریں گے جبکہ چیئر مین پی سی بی شہریار خان نے ردعمل ظاہر کیا کہ وہ وفاقی وزیر داخلہ کا بیان نامناسب سمجھتے ہیں۔ لاہور میں میڈیا سے گفتگو میں شہریار خان مجوزہ سیریز پر وفاقی وزیر چودھری نثار کے موقف کو عملاً کسی خاطر میں نہ لائے۔ انہوں نے کہا کہ ہم تو ہندوستان سے میچز چاہتے ہیں لیکن جو چودھری نثار کہہ رہے ہیں اسے مناسب نہیں سمجھتے۔ شہریار خان نے کہا کہ ہندوستان سے کھیلنے کا قطعی فیصلہ چار سے پانچ روز میں ہو جائے گا۔ بہرحال وفاقی وزیرداخلہ چودھری نثار نے پاکستان کرکٹ ٹیم کے دورۂ ہندوستان کی مخالفت کرتے ہوئے کہا ہے کہ نیشنل ٹیم کے انڈیا ٹور کی پیشکش کسی صورت قبول نہیں کرنی چاہئے۔

وفاقی دارالحکومت اسلام آباد میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے چودھری نثار نے کہا کہ ’’منہ کالا کرنے والوں کے دل کالے ہیں اور جب تک کالے دل صاف نہیں ہوتے نیشنل کرکٹ ٹیم کو ہندوستان کا دورہ نہیں کرنا چاہئے‘‘۔ انھوں نے کہا کہ شیو سینا کو کھیلوں کے دورے گوارا نہیں۔ اس سے بڑھ کرکیا دہشت گردی ہوگی۔ خورشید محمود قصوری اور غلام علی کے ساتھ کیا ہوا سب نے دیکھا ہے۔ چودھری نثار کا کہنا تھا کہ پیسہ عزت سے بڑھ کر نہیں ہے۔ ’’ٹیم کے دورے کی مخالفت کروں گا۔ تاہم حتمی فیصلہ وزیر اعظم نواز شریف کریں گے۔‘‘ وزیر داخلہ نے کہا کہ پاکستان نے ہر مرتبہ خیر سگالی کا احترام کیا لیکن ہندوستان نے ہمیشہ پاکستان دشمنی کا ثبوت دیا، وہ دشمنی اور ہم دوستی کرتے جائیں، اب ایسا نہیں ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ ’’ہندوستان نے ہر شعبۂ زندگی کے لوگوں کی تضحیک کی ہے، میں یہ معاملہ کابینہ میں اٹھاؤں گا جبکہ شیو سینا کو دہشت گرد تنظیم قرار دینے کیلئے مسئلہ عالمی سطح پر اٹھایا جائے گا‘‘۔ پاکستان اور ہندوستان کے کرکٹ بورڑ کے درمیان گزشتہ سال ایک یادداشت مفاہمت پر دستخط کئے گئے تھے جس کے مطابق دونوں ملکوں کے درمیان 2015ء سے 2023ء تک چھ باہمی سیریز کھیلی جائیں گی اور اس سلسلے کی پہلی سیریز رواں سال دسمبر میں متحدہ عرب امارات میں ہونا ہے۔ تاہم دونوں ملکوںکے درمیان موجودہ کشیدہ تعلقات اور انتہا پسند تنظیموں کے ساتھ ساتھ ہندوستانی حکومت کے غیریقینی رویے کی وجہ سے سیریز کا انعقاد مشکل نظرآتا ہے۔ اگرچہ حالیہ دنوں میں انڈین کرکٹ بورڈ نے پاکستان کو ہندوستان میں کھیلنے کیلئے مدعو کیا ہے لیکن پی سی بی کا موقف ہے کہ میزبانی کی باری اُن کی ہے۔

TOPPOPULARRECENT