Monday , September 25 2017
Home / Top Stories / پاکستان میں جیش محمد کے سربراہ مسعود اظہر گرفتار، دفاتر مہربند

پاکستان میں جیش محمد کے سربراہ مسعود اظہر گرفتار، دفاتر مہربند

پٹھان کوٹ حملے کے سازشیوں کیخلاف فوری و فیصلہ کن کارروائی کیلئے ہندوستان کی شرط پر اقدامات

اسلام آباد ۔ 13 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) پاکستان نے آج جیش محمد کے سربراہ مولانا مسعود اظہراور ان کے بھائی عبدالرحمن رؤف کے علاوہ خوفناک تنظیم سے تعلق رکھنے والے دیگر کئی افراد کو گرفتار کرلیا جن پر پٹھان کوٹ دہشت گرد حملے کی سازش میں ملوث ہونے کا شبہ کیا جارہا ہے اور اس تنظیم (جیش محمد) کے کئی دفاتر مہربند کردیئے گئے۔ ہندوستان نے جمعہ کو مقرر معتمدین خارجہ سطح کی بات چیت کے انعقاد کو اس ضمن میں اسلام آباد کی جانب سے فی الفور اور فیصلہ کن کارروائی کی شرط سے مربوط کردیا تھا۔ پاکستان اپنی ایک خصوصی تحقیقاتی ٹیم پٹھان کوٹ روانہ کرنے پر غور کررہا ہے کیونکہ ہندوستان سے تعاون کے عمل میں پیشرفت کیلئے مزید معلومات درکار ہیں۔ وزیراعظم نواز شریف کی صدارت میں منعقدہ اعلیٰ سطحی اجلاس میں پاکستان کی کارروائی کا تفصیلی جائزہ لیا گیا۔ علاوہ ازیں معتمدین خارجہ کی سطح پر بات چیت کے حشر پر بھی بغور گفت و شنید کی گئی جبکہ غیریقینی کے شکار باہمی مذاکرات کی بحالی کیلئے ہندوستانی معتمد خارجہ ایس جئے شنکر کی اسلام آباد آمد کیلئے اب بمشکل دو دن باقی رہ گئے ہیں۔ ہندوستان نے گذشتہ ہفتہ واضح طور پر یہ کہتے ہوئے مذاکرات کے مستقبل کو پاکستان کی ایماء پر چھوڑ دیا تھا کہ اسلام آباد کی جانب سے پٹھان کوٹ دہشت گرد حملے کے ضمن میں فوری اور فیصلہ کن کارروائی کی صورت میں ہی مذاکرات کا عمل بحال ہوسکتا ہے۔ وزیراعظم کے اعلیٰ سطحی اجلاس میں فوج کے سربراہ جنرل راحیل شریف آئی ایس آئی کے ڈائرکٹر جنرل رضوان اختر، وزیرداخلہ نثار علی خان، وزیرفینانس اسحق ڈار، امورخارجہ کے مشیر سرتاج عزیز کے علاوہ صوبہ پنجاب کے گورنر شہباز شریف اور دوسروں نے شرکت کی۔ ہندوستان یہ بھی واضح کرچکا ہیکہ پاکستان کو وہ ایسے تمام ضروری سراغ فراہم کرچکا ہے جس کی بنیاد پر کارروائی کی جاسکتی ہے۔ اس دوران ایک اعلیٰ عہدیدار نے کہا کہ تقریباً ایک درجن عسکریت پسندوں کو حراست میں لیا گیا ہے جن سے پوچھ گچھ جاری ہے۔ تاہم انہوں نے عسکریت پسندوں کی گرفتاری کے مقامات یا گرفتار شدگان کی عدالت میں پیشکشی کے بارے میں کچھ بتانے سے انکار کردیا۔
سرکاری توثیق نہیں ہوئی : ہندوستان
اس دوران ہندوستان نے آج رات کہا ہیکہ مسعود اظہر اور دیگر کی گرفتاری کے سلسلہ میں سرکاری طور پر کوئی توثیق نہیں کی گئی۔ وزارت امورخارجہ کے ترجمان وکاس سوروپ نے یہ بات بتائی۔

 

پاکستان میں مسعود اظہر کی گرفتار ی ہندوستانی مطالبہ کی تکمیل
اسلام آباد ۔ 13 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) پاکستان نے باور کیا جاتا ہیکہ مولانا مسعود اظہر کو گرفتار کرلیا ہے جو ایک دہشت گرد تنظیم جیش محمد کا سرغنہ ہے اور ہندوستان نے اس دہشت گرد تنظیم کو پٹھان کوٹ میں انڈین ایرفورسس کے اڈہ پر ہوئے دہشت گرد حملے کیلئے موردالزام ٹھہرایا ہے جس (حملے) میں ہندوستان کے کم سے کم سات سپاہی ہلاک ہوگئے تھے۔
l پاکستانی میڈیا نے کہا ہیکہ اظہر اور اس کے چار ساتھیوں کو اسلام آباد میں حراست میں لیا گیا۔ وزیراعظم نواز شریف کے دفتر سے قبل ازیں جاری بیان میں کہا گیا تھا کہ جیش محمد سے تعلق رکھنے والے کئی افراد کو پکڑا گیا ہے اور اس تنظیم کے کئی دفتر مہر بند کئے گئے ہیں۔
l مسعود اظہر کو 1994ء کے دوران کشمیر میں گرفتار کیا گیا تھا جب وہ پرتگال کے جعلی پاسپورٹ پر سفر کررہا تھا لیکن 1999ء میں انڈین ایرلائنس کے ایک مسافربردار طیارہ کے اغوا اور اس کو قندھار لے جائے جانے کے بعد انتہاء پسندوں کی جانب سے اس طیارہ میں سوار 155 مسافرین کی رہائی کے عوض مسعود اظہر اور ہندوستانی جیلوں میں قید دیگر دو پاکستانی دہشت گردوں کو بحفاظت رہا کردیا گیا تھا۔
l رہا شدہ دہشت گردوں میں برطانوی نژاد عمر شیخ بھی تھا جس کو 2002ء میں امریکی اخبار وال اسٹریٹ جرنل کے رپورٹر ڈینئل پرل کے قتل کا مجرم قرار دیا گیا۔
l  2001ء کے دوران ہندوستانی پارلیمنٹ پر دہشت گرد حملے کیلئے بھی مسعود اظہر کو اصل سازشی سرغنہ قرار دیا گیا تھا۔ ہندوستان نے اظہر کو اپنے حوالہ کرنے کا مطالبہ کیا تھا جس سے پاکستان نے انکار کردیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT