Sunday , June 25 2017
Home / عرب دنیا / پاکستان میں 19 سال بعد مردم شماری

پاکستان میں 19 سال بعد مردم شماری

دو لاکھ فوجی اہلکاروں کی خدمات، جنرل آصف غفور اور مریم اورنگ زیب کی مشترکہ پریس کانفرنس
اسلام آباد ۔ 13 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) پاکستان میں گذشتہ 19 سالوں کے بعد پہلی بار مردم شماری کی جانے والی ہے جس کا آغاز چہارشنبہ سے ہوگا جس کیلئے فوج کے تقریباً 2 لاکھ اہلکاروں کی خدمات حاصل کی جائیں گی۔ دریں اثناء فوج کے ترجمان جنرل آصف غفور اور ریاستی وزیر برائے اطلاعات مریم اورنگ زیب نے ایک مشترکہ کانفرنس میں چھٹویں مردم شماری کی تیاریوں کے بارے میں پوری تفصیلات بتائیں۔ دو مراحل میں منعقد کی جانے والی مردم شماری کا اختتام 25 مئی کو ہوگا۔ آصف غفور نے کہا کہ ہر سیویلین اینومیریئر کے ساتھ ایک فوجی اہلکار ہوگا جو گھر گھر جاکر وہاں رہنے والے افراد خاندان کا اندراج کریں گے۔ فوجی اہلکار نہ صرف سیکوریٹی فراہم کریں گے بلکہ مختلف خاندانوں سے حاصل ہونے والے ڈیٹا کی توثیق میں تعاون بھی کریں گے۔ مریم اورنگ زیب نے کہا کہ ہاؤسنگ اور آبادی کی مردم شماری کیلئے انتظامی اور سیکوریٹی کا اہتمام کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ مردم شماری میں 118,918 سیویلین اسٹاف ہوگا جن کا تعلق مختلف سرکاری محکموں سے ہوگا اور جنہیں مردم شماری کیلئے مکمل تربیت فراہم کی گئی ہے۔ اپنی بات جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مردم شماری کا پہلا مرحلہ 15 مارچ سے شروع ہوکر 15 اپریل کو ختم ہوگا جبکہ دس روز کے وقفہ کے بعد دوسرا مرحلہ 25 اپریل سے شروع ہوکر 25 مئی کو ختم ہوگا۔ مردم شماری کیلئے 18.5 بلین روپئے مختص کئے گئے ہیں۔ انہوں نے انتباہ دیاکہ اگر مردم شماری کے دوران کسی نے اپنے خاندان سے متعلق غلط معلومات فراہم کی تو اس صورت میں 6 ماہ کی سزائے قید اور 50,000 روپئے کا جرمانہ عائد کیا جائے گا۔ پاکستان میں قبل ازیں 1998ء میں مردم شماری کروائی گئی تھی اور اس وقت پاکستان کی آبادی 180 ملین بتائی گئی تھی۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT