Tuesday , August 22 2017
Home / کھیل کی خبریں / پاکستان کی لارڈز پر واپسی ، محمد عامر پر نظریں مرکوز

پاکستان کی لارڈز پر واپسی ، محمد عامر پر نظریں مرکوز

انگلینڈ کیخلاف پہلے ٹسٹ کا آج آغاز ۔ میزبانوں کیلئے اینڈرسن عدم دستیاب ۔ کک اور مصباح کی ٹیموں کا دلچسپ مقابلہ متوقع

لندن ، 13 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) پاکستان کے محمد عامر کو امید رہے گی کہ 2010ء کا اسپاٹ فکسنگ اسکینڈل ہمیشہ کیلئے پس پشت چلا جائے جب وہ انگلینڈ کے خلاف جمعرات سے لارڈز میں پہلے ٹسٹ میں اُسی مقام پر واپسی کریں گے جہاں وہ معاملہ پیش آیا تھا۔ چھ سال قبل انگلینڈ کے خلاف لارڈز ٹسٹ کے دوران عامر اور پاکستان کے نئی گیند والے پارٹنر محمد آصف نے کیپٹن سلمان بٹ کی ہدایات پر دانستہ ’نو بال‘ پھینکے تھے جو ایک اخبار کی جانب سے اسٹنگ آپریشن کا حصہ ثابت ہوا۔ تمام تینوں کو کرکٹ سے پانچ سالہ امتناع بھگتنا پڑا اور اسپورٹس ایجنٹ مظہر مجید کے ساتھ سب کو مختلف میعاد کی سزائے قید ہوئی۔ اس تنازعہ کا اثر ایسا شدید ہوا کہ یہ حقیقت کہ کم عمر اسٹار عامر کا اُس میچ کی پہلی اننگز میں 6/84 کا مظاہرہ بڑی حد تک فراموش کردیا گیا۔ کرکٹ سے دوری کے اپنے تمام وقت میں 24 سالہ پیسر نے اچھی رفتار والی بولنگ میں گیند کو آخری مرحلے میں سوئنگ کرنے کی قابلیت برقرار رکھی، جس کا انھوں نے پاکستان کے ٹور اوپنر میں سومرسٹ کے خلاف پہلی اننگز میں 3/36 کی کارکردگی میں مظاہرہ پیش کیا ہے۔ اس کا مطلب ہے کہ انگلینڈ کی ٹیم کا سب سے زیادہ وکٹیں لینے والے مگر زخمی جیمز اینڈرسن سے محروم ہونا اور آل راؤنڈر بن اسٹوکس کو حاشیہ پر رکھ دینے کے نتیجے میں اب وہ حالات نہیں رہے جو اس سے قبل سری لنکا کے مقابل 2-0 کی ہوم سیریز جیت کے دوران رہے۔ یوں تو سابق پاکستانی بیٹسمن رمیز راجہ جیسی شخصیتوں نے عامر کو انٹرنیشنل کرکٹ میں واپسی کی اجازت دینے کے جواز پر شبہات ظاہر کئے ہیں لیکن دونوں طرف کے کھلاڑیوں نے موجودہ صورتحال کو قبول کرلیا ہے۔

انگلینڈ کے بیٹسمن جوو روٹ نے کہا کہ ہم اس تعلق سے تبصرے کرسکتے ہیں لیکن حقیقت یہ ہے یہ بات تبدیل ہونے والی نہیں کہ وہ جمعرات کو ہمارے خلاف بولنگ کی شروعات کریں گے یا اس پوری (چار میچ کی) سیریز میں ہمارے خلاف کھیلیں گے۔ ایسا نہیں کہ عامر ہی پاکستانی بولنگ لائن اپ میں واحد خطرہ ہیں جہاں اُن کے ساتھ لیفٹ آرم وہاب ریاض، سہیل خان اور لیگ اسپنر یاسر شاہ بھی شامل ہیں۔ اس سیریز کی کلید دونوں ٹیموں کے ٹاپ آرڈر بیٹسمین ہوسکتے ہیں۔ انگلینڈ کو سری لنکا کے خلاف ابتدائی جھٹکوں سے کئی بار اِن فام مڈل آرڈر بیٹسمن جانی بیرسٹو نے مشکل سے باہر نکالا ہے۔ پاکستان کے پاس کپتان مصباح الحق اور ویٹرن یونس خان کے علاوہ اِن فام اسد شفیق کی شکل میں مضبوط مڈل آرڈر موجود ہے۔ مگر اوپنرز محمد حفیظ اور شان مسعود کے تعلق سے شبہات بدستور موجود ہیں، ٹھیک اسی طرح جیسے یہ تشویش ہے کہ آیا الیکس ہیلز جنھیں ہنوز ٹسٹ سنچری اسکور کرنا ہے، انگلینڈ کے ٹاپ آرڈر میں کپتان السٹیر کک کے پارٹنر کے طور پر درست کھلاڑی ہیں یا نہیں۔ انگلینڈ کیلئے اینڈرسن کے بغیر کھیلنا جھٹکہ ہے۔ تاہم جب انھیں گزشتہ سال کے چوتھے ٹسٹ سے خارج از امکان قرار دیا گیا تھا، ساتھی پیسر اسٹوارٹ براڈ نے اپنے ٹرینٹ برج ہوم گراؤنڈ پر 8/15 لئے اور آسٹریلیا 60 پر ڈھیر ہوگیا تھا جس کے ساتھ ایشز جیت کی راہ ہموار ہوئی۔

TOPPOPULARRECENT