Wednesday , September 20 2017
Home / پاکستان / پاک ۔ افغان سرحد پر مشترکہ طلایہ گردی پر پاکستان کا کھلا ذہن

پاک ۔ افغان سرحد پر مشترکہ طلایہ گردی پر پاکستان کا کھلا ذہن

وزیراعظم پاکستان عباسی کا بیان،جرمنی سے افغان عوام کے اخراج کا احیاء
اسلام آباد۔ 13 ستمبر (سیاست ڈاٹ کام) وزیراعظم پاکستان شاہد خاقان عباسی نے کہا کہ ان کا ملک افغانستان کی سرحد پر عسکریت پسندوں کے مقابلے کیلئے مشترکہ طلایہ گردی کے سلسلے میں کھلا ذہن رکھتا ہے۔ ان کا یہ تبصرہ صدر امریکہ ڈونالڈ ٹرمپ کی جانب سے پاکستان پر عسکریت پسندوں کو محفوظ پناہ گاہیں فراہم کرنے پر سخت تنقید کے چند دن بعد منظر عام پر آئی ہے۔ عباسی نے کہا کہ پاکستان، افغان مسئلہ کی پرامن یکسوئی کا پابند ہے۔ انہوں نے 2600 کیلومیٹر طویل پاک ۔ افغان سرحد پر باڑھ نصب کرنے کا بھی حوالہ دیا جس کا پہلے ہی آغاز ہوچکا ہے۔ انہوں نے کہا کہ افغان عوام کا خیرمقدم کیا جائے گا، اگر وہ اپنی جانب باڑھ نصب کرنا شروع کردیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان باہمی جانچ اور مشترکہ طلایہ گردی کے سلسلے میں کھلا ذہن رکھتا ہے تاکہ ان سیاحوں کی جانچ کی جاسکے جو روزانہ سرحد پار کرتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ افغانستان کے عدم استحکام سے پاکستان زبردست مصائب کا شکار رہ چکا ہے اور افغان تنازعہ کی افغان زیرقیادت اور خود افغان عوام کی ملکیت کے ذریعہ یکسوئی کا پابند رہے گا۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ درحقیقت عسکریت پسند افغانستان میں ہی مقیم ہیں اور وہ سرحد پار کرکے بوقت ضرورت پاکستان میں داخل ہوتے ہیں۔کابل سے موصولہ اطلاع کے بموجب جرمنی سے خارج شدہ 8 افغان افراد واپس افغانستان پہنچ گئے جنہیں جرمنی نے سیاسی پناہ دینے سے انکار کردیا تھا۔ جرمنی نے افغان عوام کے اخراج کو کچھ مدت کیلئے معطل کردیا تھا جس کا دوبارہ احیاء ہوچکا ہے۔

TOPPOPULARRECENT