Sunday , April 30 2017
Home / شہر کی خبریں / پرائمری ہیلت سنٹرس میں مخلوعہ جائیدادوں پر عنقریب تقررات

پرائمری ہیلت سنٹرس میں مخلوعہ جائیدادوں پر عنقریب تقررات

مراکز کو طبی سہولتوں سے بہتر بنانے کے اقدامات ، وزیر صحت ڈاکٹر لکشما ریڈی
حیدرآباد۔20 مارچ (سیاست نیوز) وزیر صحت ڈاکٹر لکشما ریڈی نے کہا کہ حکومت پرائمری ہیلتھ سنٹرس میں طبی سہولتوں کو بہتر بنانے کے اقدامات کررہی ہے تاکہ دیہی علاقوں میں عوام کو بہتر سہولتیں حاصل ہوں اور انہیں شہری علاقوں کا رخ کرنا نہ پڑے۔ ڈاکٹر لکشما ریڈی نے کہا کہ ریاست میں 698 پرائمری ہیلتھ سنٹرس ہیں اور حکومت ان کی مخلوعہ جائیدادوں پر جلد تقررات کرے گی۔ وقفہ سوالات کے دوران وی سرینواس گوڑ کے سوال کے جواب میں وزیر صحت نے بتایا کہ حکومت نے تمام پرائمری ہیلتھ سنٹرس میں بنیادی سہولتوں کی فراہمی کا عمل مکمل کرلیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر پرائمری ہیلتھ سنٹرس مستحکم رہیں تو ٹیچنگ ہاسپٹلس کے بوجھ میں کمی آئے گی۔ اسی نظریہ کے تحت حکومت اقدامات کررہی ہے۔ لکشما ریڈی نے الزام عائد کیا کہ سابقہ حکومتوں نے پرائمری ہیلتھ سنٹرس کو نظرانداز کردیا تھا۔ ڈاکٹرس کی کمی اور طبی عملے کی عدم دلچسپی کے باعث مریضوں کی اموات کے واقعات پیش آرہے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت نے پرائمری ہیلتھ سنٹرس کی ترقی کے لیے خصوصی فنڈس الاٹ کیے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت نے جی او ایم ایس 89 مورخہ 13 جولائی 2016ء کے ذریعہ ہیلتھ اینڈ فیملی ویلفیر ڈپارٹمنٹ کو 2118 جائیدادوں پر تقررات کی اجازت دے دی ہے۔ تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن کے ذریعہ یہ تقررات عمل میں لائے جائیں گے۔ وزیر صحت نے پرائمری ہیلتھ سنٹرس میں مخلوعہ جائیدادوں کی تفصیلات جاری کیں۔ ڈاکٹرس کے بشمول پیرامیڈیکل اسٹاف کی کئی جائیدادیں مخلوعہ ہیں۔ انہوں نے اعتراف کیا کہ دیہی علاقوں میں طبی سہولتوں کی کمی نے شہری علاقوں میں سرکاری اور خانگی دواخانوں میں مریضوں کی تعداد میں اضافہ کردیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ شہر میں عثمانیہ اور گاندھی ہاسپٹلس کی خدمات کو بھی بہتر بنایا گیا ہے۔ وزیر صحت نے ٹی آر ایس رکن سرینواس گوڑ کو تیقن دیا کہ دیہی علاقوں میں پرائمری ہیلتھ سنٹرس کے عملے کی موجودگی کو یقینی بنانے عہدیداروں کے ذریعہ مہم چلائی جائے گی۔ سرینواس گوڑ نے الزام عائد کیا کہ سابقہ حکومتوں نے غریبوں کو طبی سہولتوں کی فراہمی کو نظرانداز کردیا تھا۔ پرائمری ہیلتھ سنٹرس اور سرکاری دواخانے عملے کے بغیر عوام کی زندگیوں کے لیے خطرہ بن چکے تھے۔ انہوں نے کہا کہ آج بھی بعض سرکاری دواخانوں کے بارے میں عوام کی رائے ٹھیک نہیں ہے۔ اگر مریض کو صحتمند واپس لانا نہیں ہے تو انہیں سرکاری دواخانے سے رجوع کرنے کی بات کی جاتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ عوام کا اعتماد پرائمری ہیلتھ سنٹرس اور سرکاری دواخانوں پر بحال کرنے کے لیے اقدامات کئے جائیں۔ سرینواس گوڑ نے چیف منسٹر کے چندر شیکھر رائو کی ستائش کی اور کہا کہ چیف منسٹر نے ریاست میں طبی خدمات کو بہتر بنانے کے لیے جامع منصوبہ تیار کیا ہے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT