Friday , June 23 2017
Home / شہر کی خبریں / پرانے شہر میں آلودہ پانی کی سربراہی کا مسئلہ ہنوز برقرار

پرانے شہر میں آلودہ پانی کی سربراہی کا مسئلہ ہنوز برقرار

وبائی امراض پھوٹ پڑنے کا امکان، شہریوں میں تشویش کی لہر

حیدرآباد۔19فروری(سیاست نیوز) پرانے شہر کے علاقوں علی آباد‘ قادری چمن ‘ انجن باؤلی‘ ہری باؤلی کے علاوہ جنگم میٹ میں آلودہ پانی کی سربراہی کا مسئلہ حل نہ ہونے کے سبب عوام میں بے چینی پائی جاتی ہے۔ شہر میں جاری وبائی امراض سے پریشان عوام کو ان حالات میں مزید پریشانیو ںکا سامنا کرنا پڑ رہا ہے جب انہیں پینے کے پانی کی جگہ آلودہ پانی سربراہ کیا جا رہا ہے اور اس سلسلہ میں متعدد شکایات کے باوجود عہدیداروں کی جانب سے تساہل برتنے کے سبب عوام میں شدید برہمی پائی جاتی ہے۔ مقامی عوام نے بتایا کہ گذشتہ 4ماہ کے دوران کئی مرتبہ اس مسئلہ کو منتخبہ عوامی نمائندوں کے علاوہ عہدیداروں کو واقف کروایا جاچکا ہے اور اس کے بعد بھی مسئلہ جوں کا توں برقرار ہے۔ ان علاقوں میں آلودہ پانی کی سربراہی کے متعلق متعلقہ رکن اسمبلی نے بھی اعلی عہدیداروں کو واقف کروایا تھا اور اعلی عہدیداروں نے ان علاقوں کا دورہ کرتے ہوئے مسئلہ کی عاجلانہ یکسوئی کا تیقن بھی دیا تھا لیکن اس کے باوجود اب تک کوئی عملی اقدامات نہ کئے جانے کے سبب ان علاقوں میں بسنے والے غریب شہری اسی پانی کو ابال کر استعمال کرنے پر مجبور ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ متعلقہ عہدیداروں نے اس بات کی توثیق کی ہے کہ پانی کی سربراہی کی لائن میں ڈرین کی لائن کے مل جانے کے سبب ان علاقوں میں آلودہ پانی سربراہ ہونرہا ہے اور آبی سربراہی لائن کی ازسرنو تنصیب کے علاوہ کوئی دوسرا راستہ موجود نہیں ہے اسی لئے نئی پائپ لائن کی تنصیب کے سلسلہ میں اقدامات کئے جارہے ہیں اور اس کے لئے مزید وقت درکار ہو سکتا ہے۔ جنگم میٹ‘ علی آباد کے علاقو ںمیں موجود شہریوں نے اس بات کی شکایت کی کہ انہیں صاف پینے کا پانی نہ مل پانے کے سبب کئی شہری جو پانی خرید کر پینے کے متحمل ہیں وہ پانی خرید رہے ہیں لیکن جو غریب شہری ہیں انہیں مشکلات کا سامنا کرنا پر رہا ہے۔ مقامی عوام نے عہدیداروں سے اپیل کی کہ وہ اس سلسلہ میں فوری کاروائی کرتے ہوئے کم از کم علاقہ میں پانی کی سربراہی کو فوری بند کرتے ہوئے ٹینکرس کے ذریعہ پانی کی سربراہی کے اقدامات کریں کیونکہ اس آلودہ پانی کے استعمال سے بچوں کی صحت متاثر ہونے کا خدشہ ہے اور ان خدشات میں اس وقت اضافہ ہورہا ہے جب وبائی امراض میں اضافہ ہوتا نظر آرہا ہے۔ پرانے شہر کے ان علاقوں کے علاوہ بعض دیگر علاقوں سے بھی آلودہ پانی کی سربراہی کی شکایات موصول ہو رہی ہیں لیکن محکمہ آبرسانی کے عہدیدار ان شکایات پر خاموش تماشائی بنے ہوئے ہیںاور واضح طور پر کہہ رہے ہیں کہ نئی پائپ لائن کی تنصیب ناگزیر ہوچکی ہے اسی لئے وہ فوری کوئی حل دریافت کرنے سے قاصر ہیں۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT