Friday , June 23 2017
Home / شہر کی خبریں / پرانے شہر میں گرما کے ساتھ ہی پینے کے پانی کی سربراہی کا مسئلہ

پرانے شہر میں گرما کے ساتھ ہی پینے کے پانی کی سربراہی کا مسئلہ

عوام کو مشکلات کا سامنا ، پانی کی ٹانکیوں پر طویل قطاریں ، متبادل انتظامات ضروری
حیدرآباد۔10اپریل (سیاست نیوز) پرانے شہر کے کئی علاقوں میں آبی سربراہی میں تخفیف کی شکایات موصول ہونے لگی ہیں اور پانی کی قلت کے سبب عوام کو کئی مسائل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ محکمہ آبرسانی کی جانب سے شہر کے کئی علاقوں میں پانی کی سربراہی میں تخفیف کی شکایت کا اعتراف کرتے ہوئے یہ کہا جا رہا ہے کہ بعض علاقوں میں سربراہی متاثر ہونے کی مختلف وجوہات ہیں اور ان کا جائزہ لیا جا رہا ہے ۔ عہدیداروں نے واضح کیا کہ فوری طور پر مسائل کا حل ممکن نہیں ہے لیکن راحت پہنچانے کے لئے اقدامات کئے جائیں گے۔ گرمی کی شدت میں ہو رہے اضافہ اور تمازت کے سبب زیر زمین پانی کی سطح میں گراوٹ کے متعلق محکمہ آبرسانی کا کہنا ہے کہ بعض علاقوں میں تیزی سے گراوٹ ریکارڈ کی جا رہی ہے ۔دونوں شہروں کو جن ذخائر آب سے پانی کی سربراہی عمل میں لائی جا رہی ہے ان کی سطح میں کوئی کمی نہیں ریکارڈ کی گئی ہے لیکن پانی کے پریشر میں کمی کا جائزہ لیا جا رہا ہے ۔پرانے شہر کے کئی علاقوں میں عوام کا کہنا ہے کہ موسم گرما کے آغاز کے ساتھ ہی آبی سربراہی میں کمی دیکھی جا رہی تھی لیکن اب پرانے شہر کے اونچے مقامات پر پانی کی سربراہی بند کے مماثل ہو چکی ہے لیکن اس کے باوجود اب تک بھی ٹینکرس کے ذریعہ پانی کی سربراہی کے عمل کی شروعات نہ کئے جانے سے عوام کو پانی کے حصول کے لئے مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے اوران مشکلات سے نمٹنے کے لئے شہری دور دراز کے علاقوں سے پانی لیجانے پر مجبور ہو رہے ہیں اور اکثر رات کے اوقات میں مغلپورہ‘ علی نگر‘ چندو لعل بارہ دری اور دیگر علاقوں کے پانی کی ٹانکیوں پر عوام کی قطار دیکھی جانے لگی ہے جو کہ سربراہی آب میں ہونے والے مشکلات کے سبب یہاں سے پانی بھر لیجانے پر مجبور ہیں۔ حلقہ اسمبلی بہادر پورہ‘ چارمینار ‘ چندرائن گٹہ کے علاوہ مہیشورم کے کئی علاقو ںمیں مناسب آبی سربراہی نہ ہونے کے باعث عوام کو تکالیف کا سامنا کرنا پر رہا ہے ۔حلقہ اسمبلی راجندر نگر کے بھی کئی علاقوں سے عوام اس بات کی شکایت کررہے ہیں کہ ان کے علاقو ںمیں پانی کی پریشر کم آرہاہے اور جن علاقوں میں2گھنٹے پانی کی سربراہی ہوا کرتی تھی ان علاقو ںمیں اب صرف ایک گھنٹہ پانی سربراہ کیا جا رہا ہے جو کہ ناکافی ہے۔ان حلقہ جات اسمبلی میں آبی سربراہی کے متعلق عہدیداروں کا کہنا ہے کہ کئی علاقو ںمیں مرمتی کام زیر التواء ہونے کے علاوہ پائپ لائن کی تنصیب کا کام باقی ہے اور اس کے لئے بھاری بجٹ درکار ہے لیکن عام طور پر یہ دیکھا جا رہا ہے کہ پراجکٹ اور کسی ترقیاتی کا م کی شروعات کردی جاتی ہے لیکن فنڈز کی قلت کے سبب ان کاموں کو تکمیل تک نہیں پہنچایا جارہا ہے جس کے سبب عوام کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT