Thursday , August 24 2017
Home / ہندوستان / پرجاپتی کو سپریم کورٹ سے بھی راحت نہ مل سکی

پرجاپتی کو سپریم کورٹ سے بھی راحت نہ مل سکی

ایف آئی درج کرنے کے حکم کو سیاسی رنگ دینے پر برہمی
نئی دہلی ۔6 مارچ ۔ ( سیاست ڈاٹ کام )اُترپردیش کے وزیر گیاتری پرساد پرجاپتی جو عصمت ریزی کے ایک مقدمہ میں گرفتاری سے بچنے کیلئے مفرور ہیں آج سپریم کورٹ سے راحت حاصل کرنے میں ناکام ہوگئے ۔ عدالت عظمیٰ نے اس بات پر اپنی ناخوشی کا اظہار کیا کہ ایس پی لیڈر کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے سے متعلق اس کے حکم کو سیاسی رنگ دیا جارہا ہے ۔ جسٹس اے کے سکری کی قیادت میں ایک بنچ نے واضح کیا کہ اس نے اُترپردیش پولیس کو صرف یہ حکم دیا تھا کہ پرجاپتی کے خلاف مبینہ اجتماعی عصمت ریزی کے علاوہ ایک عورت اور اس کی بیٹی کی عصمت ریزی کی کوشش سے متعلق مقدمات پر ایف آئی آر درج کیا جائے اور وہ ان مقدمات کی نگرانی نہیں کررہی ہے ۔ سپریم کورٹ نے پرجا پتی کی درخواست ضمانت کو مسترد کردیا اور کہاکہ ’’وزیر موصوف مناسب راحت کیلئے متعلقہ عدالت سے رجوع ہوسکتے ہیں‘‘ ۔ عدالت عظمیٰ نے 17 فبروری کو یوپی پولیس کی ہدایت کی تھی کہ سماج وادی پارٹی ( ایس پی ) کے لیڈر پرجاپتی کے خلاف ایف آئی آر درج کریں اور ان واقعات پر اندرون آٹھ ہفتے سربہ مہر لفافہ میں ایک کارروائی رپورٹ پیش کی جائے۔ بنچ نے برہمی کے ساتھ کہا کہ ’’ہم نے صرف ایف آئی آر درج کرنے اور تحقیقات کے آغاز کا حکم دیا تھالیکن اس حکم کو اب سیاسی رنگ دیا جارہا ہے ۔ پولیس کو چاہئے کہ وہ تحقیقات کرے اور جو کچھ کہنا ہے اسے عدالت میں کہا جائے ‘‘۔ پرجاپتی کے مخالفین اس ریاست میں انتخابی مہم کے دوران اس مسئلہ کو انتخابی موضوع بنارہے ہیں جبکہ انھوں (پرجاپتی) نے اس واقعہ کو محض اپنے مخالفین کی ایک سازش قرار دیتے ہوئے مسترد کردیا اور دعویٰ کیا کہ ان کے خلاف شکایت کنندہ کا تعلق بی جے پی سے ہے ۔ عرضی خارج ہونے کے ساتھ ہی ان کی مشکلیں اور بڑھ گئیں۔ ان پر خودسپردگی کرنے کا دباؤ بڑھ گیا۔ وہ اگر خودسپردگی نہیں کرتے ہیں تو ان کی کسی بھی پل گرفتاری ہوسکتی ہے ۔ریاست کے ایک سینئر پولیس افسر نے کہاکہ گائتری پرجاپتی اور اس معاملے میں ملزام ان کے دیگر ساتھیوں کی تلاش میں پولیس بڑی سرگرمی سے چھاپے مار رہی ہے ۔ انہیں کسی بھی پل گرفتار کیا جاسکتا ہے ۔ ان کے درست ٹھکانہ کا پتہ نہیں مل رہا ہے ، لیکن اب وہ گرفتاری سے بچ نہیں سکتے۔اس معاملے کو گورنر رام نائک کے خط نے مزید طول دیا۔
مسٹر نائک نے وزیر اعلیٰ کو کل ارسال کردہ خط میں کہا ہے کہ گائتری پرساد پرجاپتی کے خلا ف غیرضمانتی وارنٹ جاری ہونے کے بعد کابینہ میں ان کے برقرار رہنے کے جواز پر سوال کھڑا کردیا ہے ۔سپریم کورٹ کے حکم سے گزشتہ 18 فروری کو وزیر ٹرانسپورٹ گائتری پرساد پرجاپتی پر ایک عورت کی اجتماعی عصمت دری اور اس کی نابالغ بیٹی کے جنسی استحصال کے الزام میں لکھنؤ کے گوتم پلی تھانہ میں درج مقدمہ کے سلسلے میں ایک مقامی عدالت نے ان کیخلاف غیرضمانتی وارنٹ جاری کیا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT