Monday , September 25 2017
Home / شہر کی خبریں / پسماندہ طبقات کیخلاف حکومت کے رویہ پر اظہار ناراضگی

پسماندہ طبقات کیخلاف حکومت کے رویہ پر اظہار ناراضگی

یوم تاسیس تلنگانہ کے دوران بی سی پالیسی کے اعلان پر زور: آر کرشنیا

حیدرآباد 22 مئی (سیاست نیوز) قومی صدر بی سی ویلفیر اسوسی ایشن و رکن اسمبلی مسٹر آر کرشنیا نے پسماندہ طبقات کے تعلق سے حکومت تلنگانہ کے اختیار کردہ رویہ کے خلاف سخت ردعمل کا اظہار کیا اور 2 جون کو منعقد کی جانے والی تلنگانہ یوم تاسیس تقاریب کے موقع پر ’’بیاک ورڈ کلاسیس پالیسی‘‘ (بی سی پالیسی) کے اعلان کا چیف منسٹر کے چندرشیکھر راؤ سے مطالبہ کیا۔ انھوں نے اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے چیف منسٹر پر ریاست تلنگانہ میں پسماندہ طبقات کو کچلنے کی کوشش کرنے اور مکمل طور پر معاندانہ رویہ اختیار کرنے کا الزام عائد کیا اور کہاکہ ہر سطح پر پسماندہ طبقات کی ترقی میں رکاوٹیں پیدا کی جارہی ہیں۔ انھوں نے ریاست تلنگانہ میں کے جی تا پی جی مفت تعلیم کے مسئلہ پر فوری طور پر وضاحت کرنے کا حکومت سے پرزور مطالبہ کیا۔ علاوہ ازیں پسماندہ طبقات کو تعلیمی لحاظ سے ترقی دینے کے لئے ریاست تلنگانہ میں بی سیز کے لئے 500 گروکل اسکولس منظور کرکے فوری قیام عمل میں لانے کا بھی مطالبہ کیا۔ مسٹر کرشنیا نے چیف منسٹر کے چندرشیکھر راؤ کو سخت انتباہ دیتے ہوئے کہاکہ ریاست تلنگانہ میں پسماندہ طبقات کے ساتھ امتیازی سلوک کرنے کی صورت میں خاموشی اختیار نہیں کی جائے گی۔ بلکہ ریاست بھر میں بڑے پیمانے پر حکومت کے خلاف جدوجہد کا آغاز کیا جائے گا۔ اُنھوں نے مزید کہاکہ ریاست بھر میں پسماندہ طبقات کو باشعور بنانے اور ان میں بیداری پیدا کرنے کے مقصد سے جاریہ ماہ 26 جون سے دیہی سطح تا شہری علاقوں میں بی سیز میں شعور بیداری مہم منظم کرکے مختلف پروگرامس منعقد کئے جائیں گے۔

TOPPOPULARRECENT