Monday , June 26 2017
Home / شہر کی خبریں / پسماندہ مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کی فراہمی کے بل کی منظوری پر مسلم ریزرویشن فرنٹ کا اظہار مسرت

پسماندہ مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کی فراہمی کے بل کی منظوری پر مسلم ریزرویشن فرنٹ کا اظہار مسرت

وزیراعلی کے سی آر کا اقدام جراتمندانہ ، دیگر ریاستوں کے لیے قابل تقلید
حیدرآباد ۔ 17 ۔ اپریل : ( پریس نوٹ ) : محمد افتخار الدین احمد ایڈوکیٹ ریاستی صدر مسلم ریزرویشن فرنٹ ، ریاض پاشاہ ایڈوکیٹ جنرل سکریٹری ، محمد محمود سکریٹری نے وزیراعلی کے چندر شیکھر راؤ کی جانب سے ریاستی قانون ساز اسمبلی اور کونسل میں پسماندہ مسلمانوں کو تعلیم اور روزگار کے میدانوں میں موجودہ 4 فیصد تحفظات کو بڑھا کر 12 فیصد کرنے کے لیے پیش کردہ بل کو دونوں ایوانوں میں متفقہ طور پر منظور ہونے پر مسرت کا اظہار کیا اور کہا کہ 2014 کے عام انتخابات میں تلنگانہ راشٹریہ سمیتی کے انتخابی منشور میں مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات کی فراہمی کے وعدہ کی تکمیل ہے ۔ بی سی کمیشن کے سفارشات کے حصول کے ساتھ ہی وزیراعلیٰ کے سی آر نے مسلمانوں سے کیے گئے اپنے انتخابی وعدہ کو نبھاتے ہوئے اسمبلی کے خصوصی اجلاس کے ذریعہ 12 فیصد تحفظات کے بل کو منظور کروا کر ہندوستانی سیاست میں ایک بے مثال تاریخ رقم کی ہے ۔ کے سی آر کے اس منصفانہ اقدام سے ریاست تلنگانہ کے مسلمانوں میں مسرت کی لہر دوڑ گئی ۔ عرصہ دراز سے مسلمان پسماندگی کی بنیاد پر آبادی کے تناسب سے تعلیم اور روزگار میں تحفظات کا مطالبہ کررہے تھے لیکن نام نہاد سیکولر جماعتوں نے مسلمانوں کو صرف ووٹ بینک کی طرح استعمال کیا ۔ کے سی آر کا یہ جرات مندانہ اقدام ملک کی دیگر ریاستوں کے لیے مشعل راہ ہے ۔ مسلم ریزرویشن فرنٹ نے بی جے پی کے ریاستی قائدین کے ذریعہ مسلم تحفظات کے مسئلہ کو فرقہ وارانہ رنگ دینے کی کوششوں کی سخت مذمت کرتے ہوئے کہا کہ پسماندہ مسلمانوں کو تحفظات کی فراہمی ان کا آئینی حق ہے ۔ وزیر اعظم نریندر مودی نے بھوبنیشور میں کل منعقدہ بی جے پی کے قومی عاملہ اجلاس میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ترقی سے محروم پسماندہ مسلمانوں کی ہر ممکنہ مدد کرنے کی ضرورت ہے ۔ ریاستی بی جے پی کے قائدین کو چاہئے کہ اپنے وزیراعظم کے بیان کا احترام کرتے ہوئے پسماندہ مسلم تحفظات کی مخالفت کرنا بند کردیں ۔ ریاستی حکومت کے منظورہ اس تحفظات ایکٹ کو مرکزی حکومت کی منظوری حاصل ہونے کی امید جتاتے ہوئے کہا کہ جس طرح ٹامل ناڈو ایکٹ 45/94 کے تحت فراہم کردہ 69% تحفظات کو شیڈول 9 میں شامل کرتے ہوئے مرکزی حکومت نے منظور کیا ہے اسی طرح تلنگانہ کے پسماندہ مسلمانوں کے تحفظات کے قانون کو بھی منظوری ملے گی ۔ مسلم ریزرویشن فرنٹ تلنگانہ میں پسماندہ مسلمانوں کو تعلیم اور روزگار کے میدانوں میں 12 فیصد تحفظات کے عمل کی منظوری کے لیے مرکزی حکومت سے بھی نمائندگی کرے گی ساتھ ہی ساتھ گذشتہ کی طرح اپنی قانونی جنگ بھی جاری رکھے گی ۔۔

Leave a Reply

TOPPOPULARRECENT