Thursday , August 24 2017
Home / ہندوستان / پنجاب میں نیم فوجی فورسیس کا فلیگ مارچ

پنجاب میں نیم فوجی فورسیس کا فلیگ مارچ

بے حرمتی کے واقعات کے خلاف احتجاجی مظاہروں سے عام زندگی مفلوج
چندی گڑھ۔/20اکٹوبر، ( سیاست ڈاٹ کام ) پنجاب کے 4اضلاع میں احتیاطی اقدام کے طور پر آج نیم فوجی دستوں نے فلیگ مارچ کیا جبکہ بھٹنڈا کے ایک گاؤں میں مقدس کتاب کی بے حرمتی کا ایک اور واقعہ پیش آیا ہے۔ سکھ تنظیموں نے بے حرمتی کے واقعات کے خلاف آج بھی ریاست کے مختلف مقامات پر احتجاجی مظاہرے کئے۔ کشیدہ حالات کے پیش نظر اضلاع امرتسر، جالندھر، لدھیانہ اور ترن تارن میں نیم فوجی دستوں کو طلب کرلیا گیا ہے۔ امرتسر کے پولیس کمشنر جتیندر سنگھ الوک نے یہ اطلاع دی اور بتایا کہ پیرا ملٹری فورس کی جملہ 10کمپنیوں کو 3اضلاع میں روانہ کردیا گیا ہے تاکہ امن و قانون کی برقراری کو یقینی بنایا جاسکے۔ دریں اثناء ضلع بھٹنڈا کے گروسرمہراج گاؤں میں گرو گرنتھ صاحب کی مبینہ بے حرمتی کا ایک اور واقعہ پیش آیا ہے۔ پولیس نے بتایا کہ مقدس کتاب کے پھٹے ہوئے اوراق پائے جانے پر گاؤں میں صورتحال کشیدہ ہوگئی جبکہ ترن تارن میں احتجاجی سکھوں نے ایک شخص کو پکڑ کر زدوکوب کیا جس نے نگوکے میں ایک گردوارہ کے قریب مقدس کتاب کی بے حرمتی کی کوشش میں تھا۔ پولیس نے بتایا کہ بیلوننگل گاؤں کے متوطن 34سالہ ملکیت سنگھ کو تین نوجوان زبردستی پکڑ کر لے کر چلے گئے جن کا اتہ پتہ معلوم نہ ہوسکا۔

ڈی آئی جی کتور وجئے پرتاپ سنگھ نے بتایا کہ پولیس اسٹیشن ویروال میں 3نوجونوں کے خلاف ایف آئی آر درج کرلیا گیا۔ انہوں نے یہ ادعا کیا کہ مقامی دیہاتیوں نے جس شخص کو پکڑ لیا تھا اس نے گردوارہ یا گرو گرنتھ صاحب کو کوئی نقصان نہیں پہنچایا تاہم دیہاتیوں نے مشتبہ شخص کو پکڑنے کے بعد پولیس کے حوالے کرنے کے بجائے ایک خود ساختہ تنظیم ستکار کمیٹی کے حوالے کردیا۔ دریں اثناء ریاست کے مختلف مقامات پر بے حرمتی کے واقعات کا سلسلہ جاری رہنے پر سکھ کارکنوں نے آج بھی قومی شاہراہوں پر احتجاجی مظاہرے کرتے ہوئے ٹریفک کو درہم برہم کردیا۔ ریاست میں اچانک رونما حالات پر اضطرات کا اظہار کرتے ہوئے بدھ لڈھا کے سابق ایم ایل اے منگت رائے بنسل نے اکالی دل سے استعفیٰ دے دیا۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ ریاست میں پرامن حالات بگڑنے پر عام زندگی مفلوج ہوگئی ہے۔ اگرچیکہ پولیس نے پٹرولنگ میں شدت پیدا کردی ہے لیکن ایس جی پی سی ارکان بھی ریاست بھر میں مختلف گردواروں میں مقدس کتاب کی حفاظت کیلئے چوکس ہوگئے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT