Tuesday , September 26 2017
Home / شہر کی خبریں / پنچایت راج کے دیرینہ مسائل کو حل کرنے کا مطالبہ

پنچایت راج کے دیرینہ مسائل کو حل کرنے کا مطالبہ

حیدرآباد ۔ 14 ۔ ستمبر : ( سیاست نیوز ) : تلنگانہ پنچایت راج چیمبر نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ شعبہ پنچایت راج کو درپیش مسائل کی یکسوئی عمل میں لائے ۔ بصورت دیگر چیمبر کی جانب سے 9 اکٹوبر کو ’ چلو حیدرآباد ‘ پروگرام منظم کرنے کا انتباہ دیا ۔ یہ بات آج یہاں ریاستی صدر سی ستیہ نارائنا ریڈی نے پریس کانفرنس میں بتائی ۔ انہوں نے بتایا کہ علحدہ ریاست تلنگانہ کی تشکیل عمل میں آکر زائد از دیڑھ سال کا عرصہ ہوچکا ہے ۔ اس کے باوجود حکومت کی جانب سے پنچایت راج شعبہ کی ترقی کے لیے نہ تو کوئی ضروری اقدامات کئے گئے اور نہ ہی فنڈس کی اجرائی عمل میں لائی گئی جس کے نتیجہ میں دیہی سطح پر کسی بھی قسم کے کوئی ترقیاتی اور فلاحی کام کی انجام دہی ممکن نہ ہوسکی ۔ انہوں نے حکومت تلنگانہ پر زور دیا کہ وہ شعبہ پنچایت کی ترقی کے لیے بجائے ذیلی کمیٹیوں کی تشکیل عمل میں لانے کے مقامی سرپنچوں ، ایم پی ٹی سی ارکان ، زیڈ پی ٹی سی ارکان اور ایم پی پی کو بھی ایم ایل اے ، ایم پی اور ایم ایل سی ارکان کی طرح فنڈس مختص کر کے فلاحی و ترقیاتی کاموں کی انجام دہی میں مکمل اختیارات دے ۔ انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ وہ ریاستی بجٹ کے منجملہ 25 فیصد بجٹ کو دیہی ترقی کے لیے مختص کرے ۔ انہوں نے حکومت تلنگانہ کی جانب سے ریاستی سطح پر موجود 8836 پنچایت راج اداروں میں گذشتہ 7 سال سے 1050 کروڑ روپیوں کے برقی بلز کے بقایا جات کو ادا کرنے کے احکامات پر بھی اپنے شدید ردعمل کا اظہار کیا ہے ۔ اس موقع پر جنرل سکریٹری تلنگانہ پنچایت راج چیمبر مسٹر بی سدھارتھا ، نو منتخبہ ریاستی کنوینر سرپنچس فورم مسٹر ایم پرشوتم ریڈی صدر ریاستی تلنگانہ ایم پی پی فورم مسٹر چندر شیکھر یادو ، مسرز اشوک راؤ ، بابیا ، شریمتی ششی کلا کے علاوہ دیگر چیمبر اور سرپنچس فورم قائدین موجود تھے ۔۔

TOPPOPULARRECENT