Monday , October 23 2017
Home / شہر کی خبریں / پودوں کی شجرکاری تحفظ ماحولیات کیلئے اہم

پودوں کی شجرکاری تحفظ ماحولیات کیلئے اہم

ہریتا ہرم تحریک میں تبدیل، کمشنر جی ایچ ایم سی ڈاکٹر جناردھن ریڈی
حیدرآباد 10 جولائی (سیاست نیوز) ڈاکٹر جناردھن ریڈی کمشنر گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن نے کہاکہ پودوں کی شجرکاری کے مقابلہ شجرکاری کے بعد ان پودوں کا تحفظ کرنا اہمیت کا حامل ہوتا ہے اور اس اہمیت کے پیش نظر ہی حکومت کی جانب سے شروع کردہ ’’ہریتا ہارم‘‘ پروگرام ایک تحریک کی شکل اختیار کرگیا ہے لہذا گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن کی جانب سے بھی کل 11 جولائی کو جی ایچ ایم سی حدود میں واقع چار ہزار مقامات پر بڑے پیمانے پر شجرکاری کرنے کے پروگرام کو قطعیت دی گئی ہے۔ کمشنر جی ایچ ایم سی نے شہر حیدرآباد میں انجام دی جانے والی شجرکاری مہم میں عوام سے سرگرم حصہ لینے اور اس پروگرام کو کامیاب بنانے کی پرزور اپیل کی۔ انھوں نے کہاکہ مکان کی تعمیر کے موقع پر پانی کا تحفظ کرنے کے لئے واٹر ہارویسٹنگ ہٹ (پانی کا انجذاب کرنے والا گڑھا) کو ضروری قرار دینے کے ساتھ ساتھ مکانات کے اندر اور باہر درخت (پودے لگانے) اُگانے کو بھی لازمی قرار دینے کے لئے سنجیدگی سے غور کیا جارہا ہے۔ ڈاکٹر جناردھن ریڈی نے اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہاکہ پودوں کی شجرکاری کے بعد ان پودوں کی کم از کم تین سال تک حفاظت و نگرانی کرنے کی شدید ضرورت ہوتی ہے اور تب ہی پودوں کی شجرکاری کے مقصد میں کامیابی حاصل ہوسکتی ہے۔ اس کے لئے عوام کی خصوصی دلچسپی اور برابر کی ذمہ داری و حصہ داری کافی اہمیت رکھتی ہے۔ انھوں نے کہاکہ اب تک ہی نرسریوں کے لئے زائداز 25 لاکھ پودے فراہم کردیئے گئے ہیں اور پودوں کے حصول کے لئے نرسریوں کی تفصیلات greenhyderabad.cgg.gov.in ویب سائٹ پر حاصل کی جاسکتی ہیں۔ ڈاکٹر جناردھن ریڈی نے کہاکہ چیف منسٹر نے نرسریوں کی تعداد میں اضافہ کی ہدایت دی ہے لہذا ہر میونسپلٹی میں ایک نرسری کے قیام کو یقینی بنانے کے لئے حکومت کی جانب سے اقدامات کئے جائیں گے۔ بالخصوص حیدرآباد جیسے شہر میں زیادہ سے زیادہ نرسریوں کا قیام عمل میں لایا جائے گا۔ کمشنر گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن نے مزید کہاکہ فی الوقت شہر حیدرآباد (جی ایچ ایم سی کی نرسریوں میں) 80 تا 100 اقسام کے پودے دستیاب ہیں اور پودوں کی شجرکاری کے لئے ہر کسی کو پودے مفت فراہم کئے جائیں گے۔

TOPPOPULARRECENT